بدین میں پانی اترنے سے صورتحال میں کچھ بہتری آئی ہے تاہم صاف پانی کی کم یابی کی وجہ سے ریلیف کیمپوں میں پناہ لینے والے متاثرین مختلف بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں۔

بدین میں پانی اترنے سے صورتحال میں کچھ بہتری آئی ہے تاہم صاف پانی کی کم یابی کی وجہ سے ریلیف کیمپوں میں پناہ لینے والے متاثرین مختلف بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں۔

صاف پانی کی عدم دستیابی کی وجہ سےضلع بدین کےعلاقےنندو، کھوسکی، مٹھی تھری، جھرکس اورپنگریو یوسی کے تین سو سے زائد دیہات میں پیٹ کی بیماریوں کےعلاوہ جلدی امراض پھیل رہے ہیں۔ تحصیل ٹنڈوباگواورشادی لارج میں وبائی امراض میں مبتلا سینکڑوں افراد کواسپتال منتقل کردیا گیا ہےجہاں ان کا علاج ہورہا ہے۔ ضلع کے سیم نالوں میں پانی کی کمی کے باوجود ساحلی پٹی کے درجنوں گوٹھوں اور سیم نالوں کے قریبی علاقوں میں بارش کاپانی کھڑاہے۔ دوسری طرف بدین شہرکےنشیبی علاقوں سے پانی کی نکاسی کےبعد انتظامیہ نےسکولوں میں قائم ریلیف کیمپوں کے متاثرین کو گھروں میں واپس جانے کا نوٹس دے دیا ہے،ادھرگولارچی کےامیرشاہ سیم نالےمیں سمندر کا پانی مسلسل داخل ہو رہا ہے جس سے ترائی شہر کوخطرہ ہے اورمتاثرین نے اپنی مدد آپ کے تحت محفوظ مقامات پر نقل مکانی شروع کر دی ہے۔ ریلیف کیمپوں میں گنجائش نہ ہونے کی وجہ سے ہزاروں افراد اب بھی کھلے آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں جن کا کوئی پرسان حال نہیں۔