امریکہ اور بھارت میں ایٹمی تجارتی معاہدے کی تیاریاں‘ پاکستان سے تعلقات بھی اہم ہیں: وائٹ ہائوس

امریکہ اور بھارت میں ایٹمی تجارتی معاہدے کی تیاریاں‘ پاکستان سے تعلقات بھی اہم ہیں: وائٹ ہائوس

نئی دہلی + واشنگٹن (رائٹرز+ نمائندہ خصوصی+ آن لائن) امریکی صدر اوباما کے دورہ پر بھارت  اور امریکہ ایٹمی تجارتی معاہدے کی تیاریاں کر رہے ہیں مگر بھارت نے ایٹمی قوانین میں تبدیلی سے انکار کر دیا ہے۔ جمعرات کو لندن میں دونوں ممالک کے دوران مذاکرات کے دوسرے روز یہ طے پایا کہ بھارتی وزیراعظم اور امریکی صدر اتوار کے روز معاہدے کا اعلان کر سکتے ہیں بھارتی وزارت  خارجہ کے ترجمان نے بتایا کہ 45 روز میں دونوں ممالک  کے نمائندوں کی یہ تیسری ملاقات تھی ہم نے امریکہ کو اس کے قانون  سازوں کے تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے جبکہ امریکی حکام نے کہا ہے کہ بھارت کو قانون میں تبدیلی کرنی چاہئے۔  ادھر وا ئٹ ہائوس نے کہا ہے کہ امریکہ کے پاکستان  اور بھارت کے ساتھ تعلقات ایک دوسرے کی قیمت پر نہیں  اس کے لئے دونون ممالک کی اہمیت یکساں ہیں۔ امریکی قومی سلامتی کے نائب مشیر بن رجودیس نے صحافیوں کے ساتھ بات چیت میں کہا کہ ہمارے لئے یہ واضح کرنا اہم ہے کہ پاکستان اور بھارت کے ساتھ ہمارے تعلقات ایک دوسرے کی قیمت پر نہیں بلکہ ہم دونوں ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات رکھ سکتے ہیں۔ بہترین تعلقات کا قیام امریکہ‘ بھارت اور پاکستان تینوں ممالک کے مفاد میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ صدر باراک اوبامہ دوسری مرتبہ بھارت کا دورہ کر رہے ہیں تاہم وہ اس کی قیمت پر پاکستان کا دورہ نہیں کرنا چاہتے۔  امریکی صدر کے اس اقدام کا مقصد بھی یہی واضح کرتا ہے کہ امریکہ ان دونوں ممالک کا کوئی تقابل نہیں کر رہا ہے۔