شیخوپورہ، سول جج نے تلخ کلامی اور گریبان پکڑنے پر وکیل کا سرپھاڑ دیا جس پر وکلا نے تھانہ سٹی کا گھیراؤ کرکے مقدمہ کے اندراج کے لیے احتجاج کیا ۔

شیخوپورہ، سول جج نے تلخ کلامی اور گریبان پکڑنے پر وکیل کا سرپھاڑ دیا جس پر وکلا نے تھانہ سٹی کا گھیراؤ کرکے مقدمہ کے اندراج کے لیے احتجاج کیا ۔

ضلع کچہری شیخوپورہ میں صبح سول جج احمد سیعد شیخ کی عدالت میں سید علی نقوی تنویر ایڈووکیٹ ایک چوری شدہ موٹرسائیکل کی سپرداری کروانے کی غرض سے پیش ہوئے ۔ اس دوران دونوں کے درمیان سخت جملوں کا تبادلہ ہوا اور تلخ کلامی بھی ہوئی ۔ وکیل سید علی نقوی کے مطابق سول جج احمد سعید شیخ نے اپنے سامنے پڑا پیپر ویٹ اٹھا کر انکے سر میں دے مارا اور سرکاری وکیل اور سٹینو نے بھی ان پر تشدد کیا ۔ اس موقع پرسول جج احمد سعید شیخ کے حق میں متعدد جج ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کی عدالت میں جمع ہوگئے دوسری جانب سینکٹروں وکلا نے احتجاج کرتے ہوئے مقدمے کے اندراج کا مطالبہ کیا ہے ۔ واقعہ کے بعد ڈی پی او رانا شاہد پرویز نے پولیس کی بھاری نفری عدالتوں کے باہرتعینات کر دی ہے ۔ سول جج احمد سعید شیخ اور اسکے ماتخت عملہ سابق سول جج سنئیر ایڈووکیٹ سید علی نقوی تنویر کو پیپر ویٹ مار مار کر لہولہان کر دیا سیدعلی نقوی تنویر ایڈووکیٹ کو زخمی حالت میں دیکھ کر سینکٹروں وکلاءاکٹھے ہوگئےء وکلاء نے تھانہ سٹی بی ڈویژن کا گھیراﺅ کرکے مقدمہ کے اندراج کے لیے میڈیکل لیگل سرٹفیکٹ کے حصول کے لیے ڈاکٹ حاصل کرلیا