سپریم کورٹ نے چیئرمین نیب دیدار حسین شاہ کی تقرری کالعدم قرار دینے سے متعلق اپنا تحریری فیصلہ جاری کردیا ۔

سپریم کورٹ نے چیئرمین نیب دیدار حسین شاہ کی تقرری کالعدم قرار دینے سے متعلق اپنا تحریری فیصلہ جاری کردیا ۔

چیئرمین نیب دیدار حسین کی تقرری کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت جسٹس جاوید اقبال، جسٹس فیاض راجہ اور جسٹس آصف سعید کھوسہ پر مشتمل سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے کی تھی۔ کیس کا مختصر فیصلہ تین رکنی بینچ نے دس مارچ کو سنایا تھا جس میں دیدار حسین شاہ کی تقرری کو غیر آئینی قرار دیا گیا ہے۔ کیس کا تفصیلی فیصلہ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے تحریر کیا ہے جو تینتیس صفحات پر مشتمل ہے۔ فیصلے کے مطابق دیدار حسین کا تقرر نیب قانون کے سیکشن چھ کے منافی ہے جس سے عوام کا بنیادی حق آزادی سلب ہوا ہے۔ فیصلے کے مطابق چیئرمین نیب کی تقرری صدر کا صوابدیدی اختیار نہیں اس کے لیے اپوزیشن سے مشاورت ضروری تھی جو نہیں کی گئی۔ اس لیے دیدار حسین شاہ کی بطور چیئرمین نیب تقرری غیر آئینی ہے۔