عوامی مسلم لیگ غریب‘ ایم کیو ایم امیر ترین سیاسی جماعت‘ حکمران پارٹی کی کوئی جائیداد نہیں

اسلام آباد(آن لائن) پیپلز پارٹی ، مسلم لیگ (ن)، متحدہ قومی موومنٹ ، عوامی نیشنل پارٹی اور مسلم لیگ (ق) سمیت ملک کی 56 رجسٹرڈ سیاسی جماعتوں نے پولیٹیکل پارٹیز آرڈرز 2002ءکے آرٹیکل 13کے تحت اپنے اثاثوں اور بینک اکاﺅنٹس کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کرادیں تمام تفصیلات چارٹرڈ اکاﺅنٹس کی تصدیق شدہ ہیں۔ الیکشن کمیشن کو ملنے والی رپورٹ کے مطابق ایم کیو ایم ملک کی امیر ترین سیاسی جماعت ہے جس کے منقولہ ، غیر منقولہ و نقد اثاثوں کی مالیت 9کروڑ کے لگ بھگ ہے۔ سال 2008-09ءکے دوران پارٹی کی آمدنی 77.04ملین جبکہ اخراجات 37.67ملین روپے تھے ۔ حکمران جماعت پیپلز پارٹی کی ملک بھر میں کوئی جائیداد نہیں نقد اثاثے محض 4لاکھ 35ہزار کے قریب ہیں سال 2009کے دوران پارٹی میں اخراجات کی مد میں صرف 6سو روپے خرچ کئے ۔ مسلم لیگ (ن) کی منقولہ ، غیر منقولہ اور نقد اثاثوں کی مالیت 7.6 کروڑ سے زائد ہے سال 2008-09ءکے دوران پارٹی کی آمدنی 5.80ملین جبکہ اخراجات 4.10ملین رہے آڈٹ فیس سمیت پارٹی کے ذمے واجب الادا رقم 92ہزار ہے ۔ مسلم لیگ (ق) کے جون 2009ءتک غیر منقولہ اثاثے 54.62ملین جبکہ نقد اثاثے 1.34ملین ہیں گزشتہ مالی سال کے دوران پارٹی کی آمدنی 11.88ملین جبکہ اخراجات 12.11ملین تھے ۔ (ق) لیگ اور (ن) لیگ دونوں نے اسلام آباد اور لاہور کی مسلم لیگ ہاﺅس بلڈنگ کو نہ صرف اپنی ملکیت قرار دیا ہے بلکہ ان پر اٹھنے والے اخراجات بھی گوشواروں میں ظاہر کئے ہیں عوامی نیشنل پارٹی نے جون 2009ءتک اپنے منقولہ غیر منقولہ اثاثوں کی مالیت 27ملین ظاہر کی ہے جس میں 1.8ملین کا اکاﺅنٹ بیلنس شامل ہے۔ گزشتہ مالی سال کے دوران پارٹی آمدنی پوائنٹ 3ملین جبکہ اخراجات پوائنٹ50ملین تھے ۔ جماعت اسلامی نے منقولہ غیر منقولہ اور نقد اثاثوں کی مالیت 15لاکھ سے سے زائد ظاہر کی ہے گزشتہ مالی سال کے دوران جماعت اسلامی کی آمدنی 4ملین سے زائد جبکہ اخراجات 5ملین سے زائد ہیں مسلم لیگ فنکشنل کی گزشتہ سال کی آمدنی 1.4ملین سے زائد جبکہ اخراجات 1.3ملین سے زائد رہے پارٹی کے منقولہ غیر منقولہ اور نقد اثاثوں کی مالیت 6لاکھ سے زائد ہے عوامی مسلم لیگ کا کوئی بنک بیلنس نہیں جبکہ تحریک استقلال کا بنک بیلنس محض 5ہزار ہے ۔