قومی اسمبلی کے اجلاس میںMQM کی الطاف حسین کیخلاف مقدمے اورصولت مرزا کے بیان پرشدید احتجاج اورہنگامہ آرائی

قومی اسمبلی کے اجلاس میںMQM کی الطاف حسین کیخلاف مقدمے اورصولت مرزا کے بیان پرشدید احتجاج اورہنگامہ آرائی

سپیکرایاز صادق کی زیر صدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں ایم کیو ایم کے ارکان نے نائن زیرو پر چھاپے اور صولت مرزا کے بیان اور الطاف حسین پر مقدمہ کے خلاف نعرے بازی کی اورشدید احتجاج کیا، رکن قومی اسمبلی فاروق ستار کا کہنا تھا کہ سیاسی سرگرمیاں معطل کرکے ایم کیو ایم کیخلاف کارروائیاں کی جا رہی ہیں۔ جرائم کے خاتمے کی آڑ میں ایم کیو ایم کو ختم کیا جا رہا ہے  فاروق ستار نے کہا کہ وزارت داخلہ جواب دے کہ یہ سب آئین کی حکمرانی اور کراچی میں امن کیلئے ہو رہا ہے یا ہمیشہ کی طرح ہمیں آزمائش میں ڈالا جا رہا ہے، اگر آزمائش ہے تو اس سے بھی گزر جائیں گے ۔ فاروق ستار نے کہا کہ ایک پھانسی کے مجرم سے ڈیتھ سیل میں بیان لینا تاریخ کا انوکھا واقعہ ہے ۔ وزارت داخلہ جواب دے کہ کیا قانون پھانسی کے مجرم سے پانچ گھنٹے قبل بیان لینے کی اجازت دیتا ہے اور کیا یہ بیان وزیر داخلہ کی اجازت سے ہوا؟ فاروق ستار کے بیان کے بعد ایم کیو ایم اراکین نے نعرے بازی شروع کردی اور شورشرابا کیا ۔ قومی اسمبلی کا ایوان جئے جئے جئے مہاجر کے نعروں سے گونج اٹھا ۔ سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے کہا کہ ایم کیو ایم اراکین صبر و تحمل کا مظاہرہ کریں ۔ سپیکر نے تنبیہہ کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم اراکین غلط روایت ڈال رہے ہیں