پاکستان‘ بھارت مذاکرات کا دوسرا دور بھی ناکام‘ کنٹرول لائن پر تجارت‘ بس سروس معطل

پاکستان‘ بھارت مذاکرات کا دوسرا دور بھی ناکام‘ کنٹرول لائن پر تجارت‘ بس سروس معطل

ہٹیاں بالا (نوائے وقت نیوز+ اے این این+ این این آئی) سری نگر مظفرآباد تجارتی راہداری پر ایک ٹرک سے ہیروئن برآمدگی کے بھارتی الزامات کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر پاکستان، بھارت مذاکرات ناکام، کنٹرول لائن تجارت اور بس سروس کو تاحکم ثانی معطل کر دیا گیا، دونوں اطراف سے 76خالی ٹرک تیسرے روز بھی اپنے ملکوں تک نہیں پہنچ سکے۔ بھارت نے گرفتار ڈرائیور کو واپس کرنے سے پھر انکار کر دیا۔ دوطرفہ تجارت کے ذریعے گزشتہ جمعہ کے روز آزادکشمیر سے 49 مال بردار ٹرک مال لے کر مقبوضہ کشمیر گئے جن میں سے ایک ٹرک نمبر آر آئی ایس 2137 میں سے 114 پیکٹ ہیروئن برآمد ہونے کے بھارتی الزام کے بعد دوطرفہ تجارت اور بس سروس کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا ہے۔ آر پار حکام کے درمیان تین دنوں میں دوسری بار ہونے والے مذاکرات بھی بغیر کسی نتیجہ کے ختم ہوگئے۔ بھارتی حکام کا م¶قف ہے کہ جس ٹرک سے ہیروئن برآمد ہوئی ہے اس کے ڈرائیور کو گرفتار کیا گیا ہے اور ٹرک ضبط ہے انہیں پاکستان کے حوالے نہیں کیا جائے گا جس کے بعد حالات مزید کشیدہ ہو گئے ہیں۔ ٹریول اینڈ ٹریڈ اتھارٹی آزادکشمیر کے ڈی جی بریگیڈئر (ر) محمد اسماعیل نے لائن آف کنٹرول کے امن برج پر ہونے والے مذاکرات میں بھارتی حکام پر واضح کیا کہ پاکستان بھارت معاہدے کے مطابق تمام ٹرک اور ڈرائیور ہمارے حوالے کئے جائیں اور نشہ آور پا¶ڈر کے ثبوت فراہم کئے جائیں ہم خود تحقیقات کے بعد کارروائی عمل میں لائیں گے جسے بھارتی حکام نے ماننے سے انکار کر دیا ہے۔ اس ساری صورتحال حال کے پیش نظر آج پیر کے روز ہونے والی دوطرفہ سرینگر مظفرآباد بس سروس اور کل بروز منگل ہونے والے دوطرفہ تجارتی معاملات کے یکسو ہونے تک معطل کر دیا گیا ہے۔ اس حوالے سے ڈی جی ٹاٹا بریگیڈیئر (ر) اسماعیل خان نے کہا کہ بھارت کی روایتی ہٹ دھرمی اور الزام تراشی کے باعث تجارتی عمل متاثر ہو رہا ہے۔
کنٹرول لائن/ تجارت معطل