عمران خان الیکشن لڑنے کیلئے اہل قرار‘ وجاہت حسین کو مشروط اجازت

عمران خان الیکشن لڑنے کیلئے اہل قرار‘ وجاہت حسین کو مشروط اجازت

لاہور + کوئٹہ (وقائع نگار خصوصی+ نوائے وقت نیوز + وقائع نگار + نوائے وقت رپورٹ) لاہور ہائیکورٹ کے فل بنچ نے عمران خان کو الیکشن لڑنے کا اہل قرار دے دیا جبکہ لاہور ہائیکورٹ کے فل بنچ نے چودھری وجاہت حسین کو بھی الیکشن لڑنے کی مشروط اجازت دیدی ہے۔ فل بنچ نے عمران خان کی نااہلی کے لئے دائر درخواستیں مسترد کر دیں۔ عمران خان پر زرعی انکم ٹیکس، اثاثے چھپانے اور نجی زندگی سے متعلق الزامات عائد کئے گئے تھے۔ علاوہ ازیں لاہور ہائیکورٹ کے فل بنچ نے (ق) لیگ کے سربراہ چودھری شجاعت حسین کے بھائی چودھری وجاہت حسین کو این اے 104 گجرات سے انتخابات میں حصہ لینے کی مشروط اجازت دے دی۔ فاضل عدالت نے وجاہت حسین کی رٹ درخواست پر الیکشن کمشن کو حکم دیا ہے کہ درخواست گزار کا نام انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کی فہرست میں شامل کر لیا جائے۔ فاضل عدالت نے الیکشن کمشن سے جواب طلب کر لیا ہے۔ درخواست گزار نے موقف اختیار کیا تھا کہ وہ کسی بھی بنک کا نادہندہ نہیں اس نے مروجہ قانون کے مطابق قرضوں کی ایڈجسٹمنٹ کروائی ہے۔ اس کے باوجود الیکشن ٹربیونل نے اس کو الیکشن میں حصہ لینے کی اجازت نہیں دی۔ فاضل عدالت نے عبوری حکم کے ذریعے چودھری وجاہت کو الیکشن میں حصہ لینے کی اجازت دیتے ہوئے اس کو عدالت کے حتمی فیصلے سے مشروط کر دیا ہے۔ علاوہ ازیں سابق ایم این اے سلمان محسن گیلانی کی جعلی ڈگری کیس میں حفاظتی ضمانت منظور کر لی۔ لاہور ہائیکورٹ نے سلمان محسن گیلانی کی ضمانت منظور کی۔ دریں اثنا پی پی 29 سے امیدوار بابو امین عمرانی کے کاغذات نامزدگی مسترد کر دئیے تھے جس کے خلاف امیدوار نے عدالت میں اپیل دائر کی تھی، عدالت نے الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ برقرار رکھا۔ دریں اثناءلاہور ہائیکورٹ این اے119 لاہور سے مسلم لیگ (ن )کے رہنما حمزہ شہباز شریف کے کاغذات نامزدگی منظور کئے جانے کے خلاف دائر رٹ درخواست خارج کرتے ہوئے درخواست گذار کو اس سلسلے میں الیکشن کمشن سے رجوع کرنے کی ہدایت کر دی ہے۔ درخواست گذار نصیر سہیل ملک کی طرف سے درخواست میں الزام لگایا گیا کہ حمزہ شہباز نے مبینہ طور پر خفیہ شادی کر رکھی ہے مگر اپنے کاغذات نامزدگی میں حقائق چھپائے۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ حمزہ شہباز نے قومی خزانے سے لیپ ٹاپ تقسیم کر کے سیاسی مقاصد حاصل کئے۔ این این آئی کے مطابق سابق وفاقی وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ کے کاغذات نامزدگی منظور کئے جانے کے خلاف دائر درخواست پر فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 22اپریل کو جواب طلب کرلیا گیا ہے۔ علاوہ ازیں بلوچستان ہائیکورٹ نے احسان شاہ کو مشروط طور پر الیکشن میں حصہ لینے کی اجازت دے دی۔ آئی این پی کے مطابق الیکشن کمشن نے پنجاب اسمبلی کی سابق رکن آمنہ الفت اور بلوچستان سے رکن سینٹ نوابزادہ محمد اکبر مگسی کے جعلی ڈگری کیس میں متعلقہ یونیورسٹی کو حکم دیا ہے کہ وہ آمنہ الفت کا تمام تعلیمی ریکارڈ کمشن کو پیش کرے، دونوں ارکان کے کیس کی 26اپریل کو دوبارہ سماعت کی جائے گی۔