مقبوضہ کشمیر : سانحہ شوپیاں کیخلاف مظاہرے‘ کرفیو جاری‘ میرواعظ ساتھیوں سمیت گرفتار

مقبوضہ کشمیر : سانحہ شوپیاں کیخلاف مظاہرے‘ کرفیو جاری‘ میرواعظ ساتھیوں سمیت گرفتار

سری نگر(اے پی اے ) بھارتی پولیس نے حریت رہنما میر واعظ عمرفاروق کو ساتھیوں سمیت حراست میں لے لیا۔پولیس نے میر واعظ عمر فاروق اور ان کے ساتھیوں کو اس وقت گرفتار کیا جب وہ کرفیو زدہ علاقے شوپیاں کا دورہ کرنے کیلئے روانہ ہوئے۔ میر واعظ عمر فاروق کشمیری شہداء کے لواحقین سے ملاقات کرنا چاہتے تھے۔ شوپیہ میں گزشتہ ہفتے بھارتی فوج نے فائرنگ کر کے پانچ کشمیریوں کو شہید کر دیا تھا جس کے بعد کشمیری سڑکوں پر نکل آئے۔ شدید ردعمل سے ڈر کر کٹھ پتلی حکومت نے شوپیاں اور اس کے آس پاس کے علاقوں میں دس روز سے کرفیو نافذ کر رکھا ہے۔ کرفیو سے لوگوں کو بنیادی ضروریات زندگی پوری کرنے میں سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ہڑتال کے موقع پرمقبوضہ کشمیر میں کاروبار زندگی معطل رہا جبکہ احتجاجی مظاہرے بھی کیے گئے،  تینوں اضلاع میں کرفیورہا۔ بانڈی پورہ، اسلام آباد ،کنگن، گاندربل، کیموہ، ٹنگمرگ اور ترہگام میں پتھراؤ، جوابی پتھراؤ اور شیلنگ کے واقعات میں  درجنوں دیگر افراد زخمی ہوئے۔ سرینگر میں ہڑتال سے زندگی کی رفتار ایک بار پھر تھم گئی اوربازاروں میں دکانیں، تعلیمی ادارے، بینک، دفاتر اور تجارتی مراکز بند رہے اور ٹریفک معطل رہا۔ نارہ بل میں گاڑیوں پر پتھراؤ ہوا جس کے نتیجے میں کچھ گاڑیوں کو نقصان پہنچا۔ نوہٹہ، مومن آباد بٹہ مالو، نواب بازار کاوڈارہ اور پائین شہر کے دیگر علاقوں میں مشتعل نوجوانوں نے شوپیاں واقعے کیخلاف احتجاج کیا۔ میرواعظ عمر فاروق نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل ارکان امریکہ، برطانیہ ، فرانس ، چین اور روس سے کہا کہ بھارت کی طرف سے کشمیر میں نسل کشی رکوانے کیلئے بھارت پر سفارتی سطح پر دباو ڈالیں کہ وہ جموںوکشمیر میں بنیادی انسانی حقوق کی پامالیوں سے باز رہے۔کے پی آئی کے مطابق عالمی ضمیر جھنجھوڑنے کیلئے 20 ستمبر کو احتجاج اور 21 کو ہڑتال ہوگی، حریت رہنما علی گیلانی نے احتجاجی کیلنڈر جاری کر دیا ہے۔