عدلیہ کا احترام کرتے ہیں‘ ادارے اپنی آئینی حدود میں رہیں : بابر اعوان ۔..۔ موجودہ بحران غیر ذمہ دارانہ رپورٹنگ کا نتیجہ ہے : قمر الزمان کائرہ

سیالکوٹ (نامہ نگار+این این آئی) وفاقی وزیر قانون ملک بابر اعوان نے کہا ہے پاکستان ایک ایٹمی طاقت ہے اور اسے کسی قسم کاکوئی خطرہ نہ ہے ، پیپلزپارٹی کی حکومت عدلیہ اور صحافےوں سمیت تما م اداروں کا احترام کرتی ہے۔ پاکستان کے پاس دوایٹم بم ہیں جن میں ایک نیوکلیئرایٹم بم اور دوسرا ایٹم بم اٹھارہ کروڑ عوام جو جیالے، لاہوریئے ، سرائیکی ، بلوچی، سندھی عوام پر مشتمل ہے جو سب کے سب محب وطن اور دشمن کیلئے ایٹم بم ہیں۔ سیالکوٹ کے قریب ڈھلے والی میں سوئی گےس کے منصوبہ کی افتتاحی تقریب کے موقع پر بڑے جلسہ عام سے خطاب کے دوران ان کا کہنا تھا قائد عوام ذوالفقار علی بھٹو کا آمریت کے دور میں عدالت کے نام پر قتل کیا گےا اور اب ملک دوسرے کسی قتل کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ پنجاب کے کچھ لوگ یاری لگاتے ہیں لیکن نبھاتے نہیں۔ میں آج اس دھرتی پر آیا ہوں جس دھرتی کے سپوت رائے احمد کھرل نے پھانسی قبول کرلی لیکن غےروں کے آگے نہ جھکا۔ یہ دھرتی دھلا بھٹی جےسے غےرت مندوں کی بھی ہے جس نے پھانسی قبول کرلی لیکن انگریز سامراج کے سامنے سر نہیں جھکایا۔ پارلیمنٹ ، آئےن اور ملک دشمنوں کے چہرے بے نقاب کردیں گے کیونکہ ہم جمہوری لوگ ہیں اوراس لئے ہم کسی سے ڈرنے والے نہیں۔ انہوں نے کہا جمہوریت کے کمزور ہونے کے دن گزر گئے اور اب وہ لوگ کمزور ہونگے جو جمہوریت کو اس ملک میںچلنے نہیں دیتے۔ پیپلزپارٹی کو کبھی انصاف نہیں ملا اور اس کو انصاف نہ ملنے کی وجہ سے ہمیشہ پارٹی کو ووٹ دے کر حکومت دلوانے والوں کو مایوسی ہوئی اوریہی وجہ ہے کہ ملک کی عوام عدم تحفظ کا شکا رہے۔ جلسہ سے وفاقی وزیر بہبود آبادی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بھی خطاب کیا۔ صوبائی وزیر ڈاکٹر تنویرالاسلام ، ممبر صوبائی اسمبلی چودھری طاہر محمود ہندلی ایڈووکیٹ ، سابق صوبائی وزیر ملک مشتاق اعوان ، حاجی مشتاق مغل ، ملک حامد زئی ودیگر عہدیداروں اور کارکنوں کے علاوہ معززین علاقہ کی کثےرتعدا دبھی موجود تھی ۔این این آئی کے مطابق بابر اعوان نے کہا ہم عدلیہ کا احترام کرتے ہیں، اداروں کو چاہئے کہ اپنی آئینی حدود میں رہیں، عوام دوسروں کے بجائے پیپلزپارٹی کا ساتھ دیں جو اپنے تمام وعدے پورے کرتی ہے، آئندہ الیکشن میں پنجاب میں کلین سویپ کرینگے، پاکستان اب کوئی اور لاش اٹھانے کے قابل نہیں رہا، چھپ کر کھیلنے والے مردوں کی طرح سامنے آئیں، جس ملک کے عوام جاگ رہے ہوں اسے کوئی خطرہ نہیں۔
لالہ موسیٰ (نامہ نگار) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چودھری قمر زمان کائرہ نے کہا ہے کہ موجودہ بحران غیرذمہ دارانہ رپورٹنگ کا نتیجہ ہے جس کے بارے میں عدالتی حکم پر وزیراعظم نے تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دیدی ہے جو معاملے کی تہہ تک پہنچے گی، ڈیرہ کائرہ پر گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی نے عدلیہ اور ججوں کی آزادی اور بحالی کے لئے خون کے نذرانے دئیے ہیں، عدالتوں اور اداروں سے حکومت کے ٹکراﺅ کا تاثر پھیلانے والے غیر جمہوری روایات کے حامل عناصر ہیں، عدالتوں کے ساتھ لڑنے کی تاریخ پیپلزپارٹی نہیں کسی اور کی ہو گی، ہم عدالتوں سے ٹکراﺅ کے قائل نہیں، موجودہ بحران جو بنایا گیا اس کی وضاحت عدالت میں بھی کر دی ہے۔ مفروضات پر مبنی عمارت کھڑی کی گئی اور غیرضروری بحث چھیڑی گئی ہے، عدالت میں زیربحث معاملے پر اس طرح کی رپورٹنگ، عدالت کے اندر جج صاحبان کی گفتگو کی رپورٹنگ اور ایک خاص گروپ کی طرف سے خاص معافی پہنانا کسی طرح بھی صحافت کے زمرے میں نہیں آتا، مفروضوں کی صحافت اور رپورٹنگ سے ملک کی معاشی، انتظامی، سیاسی سرگرمیوں پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ اب میڈیا کے ذمہ داروں کے مخصوص گروپ کی اس طرح کی رپورٹنگ پر بحث شروع کی گئی ہے اس کے ملک کا نقصان ہوتا ہے۔ آزادانہ صحافت، رپورٹنگ ملک کے لئے بہت ضروری ہے اس کے ساتھ ساتھ ذمہ داری اس سے بھی زیادہ ضروری ہے۔ ہماری عدلیہ کے ساتھ کوئی محاذ آرائی نہیں، کسی کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں۔