کامران فیصل نے خودکشی کی‘ ذرائع‘ پولی کلینک ابھی کچھ نہیں کہہ سکتے : ترجمان ہسپتال

کامران فیصل نے خودکشی کی‘ ذرائع‘ پولی کلینک ابھی کچھ نہیں کہہ سکتے : ترجمان ہسپتال


اسلام آباد (آئی این پی+ نوائے وقت رپورٹ) پولی کلینک ہسپتال کے میڈیکل بورڈ نے نیب کے ڈپٹی ڈائریکٹر اور رینٹل پاور کیس کے تفتیشی افسر کامران فیصل کے پوسٹ مارٹم سے متعلق رپورٹ کو حتمی شکل دے کر اسے سیل کرکے پولیس کے حوالے کردیا جسے آئندہ سماعت پر سپریم کورٹ میں پیش کیا جائے گا۔ پولی کلینک ہسپتال کے ترجمان ڈاکٹر شریف استوری نے کہا کہ میڈیکل بورڈ سینئر ڈاکٹروں پر مشتمل تھا، کامران فیصل کی موت سے متعلق رپورٹ کو فرانزک اور دیگر رپورٹس کو دیکھ کر فائنل کیا گیا ہے، کیس عدالت میں زیر سماعت ہے کامران فیصل کے قتل یا خودکشی کے بارے میں کچھ نہیں کہا جا سکتا‘ ذرائع کے مطابق پولی کلینک کے میڈیکل بورڈ نے ایک بار پھر کامران فیصل کی موت کو خودکشی قرار دیتے ہوئے پنجاب فرانزک لیبارٹری کی رپورٹ کومسترد قرار دیا ہے۔ اسلام آباد میڈیکل بورڈ میں سرجری ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ ڈاکٹر آئی یو بیگ کی سربراہی میں کامران فیصل کی موت کے حوالے سے پوسٹ مارٹم رپورٹ جاری کرنے کے لئے میڈیکل بورڈ کا اجلاس ہوا جس میں میڈیکل بورڈ کے ارکان ڈاکٹر عبدالمتین، ڈاکٹر احسان الحق¾ ڈاکٹر جاوید احمد¾ ڈاکٹر امتیاز حسن اور ڈاکٹر تنویر افسر ملک نے شرکت کی¾ میڈیکل بورڈ نے کامران فیصل کی موت کے بعد کئے جانے والے پوسٹ مارٹم کی رپورٹ کا جائزہ لے کر اسے فائنل کیا جبکہ بورڈ نے رپورٹ کے مندرجات سیل کرکے پولیس کے حوالے کردیئے۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پولی کلینک ہسپتال کے ترجمان ڈاکٹر شریف استوری نے کہا کہ میڈیکل بورڈ نے کامران فیصل کے پوسٹ مارٹم کی رپورٹ کو فائنل کر دیا ہے۔ بورڈ کامران فیصل کے پوسٹ مارٹم کے حوالے سے رپورٹ کا 2دن جائزہ لیتا رہا اور آج اسے فائنل کیا گیا ہے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کامران فیصل علاج کیلئے پولی کلینک ہسپتال کے شعبہ نفسیاتی امراض میں آیا کرتے تھے۔ وہ دو ماہ پہلے بھی ہسپتال میں علاج کیلئے آئے تھے۔ میڈیکل بورڈ ماہر ڈاکٹروں پر مشتمل تھا میڈیکل بورڈ کے سربراہ ڈاکٹر آئی یو بیگ معروف سرجن ڈاکٹر ہیں اور وہ ملکی و بین الاقوامی سطح پر کئی اہم پوسٹ مارٹم کرچکے ہیں۔ ایک سوال پر ترجمان نے کہا کہ کامران فیصل کی موت کے بعد جونمونے بیرون ملک بھیجے گئے ہیں ان کا بھی جائزہ لیا جائے گا۔ فرانزک رپورٹ دیکھنے کے بعد رپورٹ کو فائنل کیا گیا ہے۔ راولپنڈی میڈیکل ہسپتال کے شعبہ فرانزک کے سربراہ ڈاکٹر متین سے بھی رائے لی گئی ہے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کامران فیصل نے خودکشی کی یا انہیں قتل کیا گیا ہے اس کے بارے میں کچھ نہیں کہا جا سکتا نہ ہی یہ کیس متنازعہ ہے یہ کیس عدالت میں زیر سماعت ہے۔ نجی ٹی وی کے مطابق پولی کلینک کی حتمی رپورٹ میں فرانزک رپورٹ کو مسترد کردیا گیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کامران فیصل نے خودکشی کی ہے۔ کامران فیصل کے جسم پر نشان قبرکشائی کے وقت لاش نکالتے ہوئے لگے۔ رپورٹ میں کامران فیصل کے جسم پر موت سے قبل موجود نشانات کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ کامران فیصل کے اعضاءسے نہ زہریلا مادہ ملا اور نہ منشیات ملی۔ فرانزک رپورٹ کے مطابق کامران فیصل کی پیشانی اور بازو پر نشانات تھے۔
حتمی رپورٹ