توہین آمیز خاکوں کیخلاف قومی اسمبلی کی متفقہ قرارداد‘ ارکان کا مارچ

توہین آمیز خاکوں کیخلاف قومی اسمبلی کی متفقہ قرارداد‘ ارکان کا مارچ

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر + وقائع نگار خصوصی) قومی اسمبلی نے فرانسیسی جریدے میں  گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے خلاف گذشتہ روز متفقہ طور پر مذمت کی قراداد منظور کی۔ قرارداد میں اقوام متحدہ اور یورپی یونین سے مطالبہ کیا گیا وہ توہین آمیز خاکوں کی اشاعت رکوانے میں اپنی ذمہ داریاں پوری کریں۔  قرارداد ریلوے کے وفاقی وزیر  خواجہ سعد  رفیق نے پیش کی۔  ایوان کے اقلیتی ارکان نے بھی قرارداد کے حق میں ووٹ دیئے اور فرانسیسی جریدہ کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔ قرارداد میں کہا گیا ہے یہ ایوان  فرانسیسی جریدے میں دوسری بار گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کی بھرپور مذمت کرتا ہے۔ ایوان نے مغربی ملکوں  میں ان خاکوں کی دوبارہ اشاعت کو بھی سنجیدگی سے محسوس کیا ہے۔ قومی اسمبلی کا یہ ایوان اظہار رائے کی آزادی کا احترام کرتا ہے تاہم اس کے ساتھ ہی عوام کے دینی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کی مذمت بھی کرتا ہے۔  قرارداد کے ذریعہ یورپی یونین اور اقوام متحدہ سے کہا گیا وہ اس قسم کے مواد کی اشاعت رکوانے میں کردار ادا کریں۔ یہ ایوان اس حوالے سے ہونے والے پرتشدد واقعات کی بھی مذمت کرتا ہے اور قرار دیتا ہے اسلام امن کا دین ہے اور تمام مذاہب اور مقدس ہستیوں کے احترام کا درس دیتا ہے۔ ایوان یہ سمجھتا ہے توہین آمیز خاکوں کا مقصد تہذیبوں اور معاشروں کے درمیان نفرت پھیلانا اور انتشار پیدا کرنا ہے جس سے  دہشت  گردوں کو مواقع میسر آتے ہیں۔ اس موضوع پر قائد حزب اختلاف خورشید شاہ نے کہا ان خاکوں کے ذریعے  مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کیا گیا۔  حکومت پاکستان  اس مسئلے کے حوالے سے دنیا بھر میں پاکستانی سفارتخانوں اور مشنز کو متحرک کرے۔ وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا انتہا پسندی اور دہشت گردی کو فروغ دیا جا رہا  ہے۔ کسی صورت گستاخی کو برداشت نہیں کیا جا سکتا۔ وفاقی وزیر مذہبی امور سردار یوسف نے کہا اس معاملہ  پر  اسلامی کانفرنس تنظیم  کا اجلاس طلب کرنا ضروری ہے۔ حکومت ہر فورم پر اس مسئلے کو اٹھائے گی قرارداد اقوام متحدہ سمیت تمام متعلقہ ممالک کو بھجوائی جائے۔ اقلیتی رکن خلیل جارج نے گستاخی کرنے والوں کو سزا دینے کا مطالبہ کیا۔ جماعت اسلامی کے رکن شیر اکبر خان نے اسلام  آباد میں مشترکہ مارچ کی تجویز دی۔ وقائع نگار خصوصی کے مطابق قومی اسمبلی میں  وفاقی وزرا حکومتی اور اپوزیشن جماعتوںکے ارکان نے توہین آمیز  خاکوں کی اشاعت کیخلاف  گذشتہ روز ایوان سے پارلیمنٹ کے  صدر  دروازے تک ڈپٹی سپیکر مرتضیٰ جاوید عباسی  کی قیادت میں احتجاجی مارچ کیا۔ ارکان اسمبلی نے گستاخانہ خاکے شائع کرنے والوں کے خلاف  شدید  نعرہ بازی  کی۔ ارکان قومی اسمبلی نے  اس عزم کا اعادہ کیا توہین آمیز خاکوں کی اشاعت برداشت نہیں کی جائے گی۔ یورپی یونین اور او آئی سی  اپنا کردار ادا کرے عالمی عدالت  بھی نوٹس لے‘ یہ عالم اسلام کے خلاف مذموم سازش ہے۔
لاہور (خصوصی نامہ نگار) جماعت اسلامی، جماعۃ الدعوۃ، جمعیت علماء اسلام (ف)، جے یو آئی (س)، جمعیت علماء پاکستان (نورانی)، سنی اتحاد کونسل، سنی تحریک اور تحریک حرمت رسول پاکستان میں شامل 20 سے زائد مذہبی، سیاسی جماعتوں نے فرانسیسی جریدے میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے خلاف آج بروز جمعہ ملک بھر میں یوم احتجاج منانے، احتجاجی مظاہرے کرنے اور ریلیاں نکالنے کا اعلان کیا ہے۔ امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے مسلمانان پاکستان سے اپیل کی ہے کہ وہ احتجاجی پروگراموں میں بھر پور شرکت کریں۔ سراج الحق نے المرکز اسلامی میں جماعت اسلامی کی صوبائی مجلس شوریٰ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا جماعت اسلامی پُر امن آئینی اور جمہوری ذرائع سے ملک میں تبدیلی اور انقلاب پر یقین رکھتی ہے۔ جماعۃ الدعوۃ کی اپیل پرآج لاہور، ملتان، کراچی اور پشاور سمیت ملک بھر میںزبردست احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے اور ریلیاں نکالی جائیں گی۔لاہور میں سب سے بڑا مظاہرہ چوبرجی چوک میں ہو گا جس میں حافظ محمد سعید سمیت مختلف مذہبی و سیاسی جماعتوں کے قائدین خطاب کریں گے۔ حافظ سعید نے قوم سے اپیل کی وہ آج ملک بھر میں ہونے والے احتجاجی مظاہروں اور ریلیوں میںبھرپور انداز میں شریک ہوں۔ جے یو آئی (ف) کی طرف سے آج احتجاجی ریلیوں کا اعلان پا رٹی کے سیکرٹری جنرل مولانا عبدالغفور حیدری نے پارٹی کے سربراہ مولانا فضل الرحمن سے مشاورت کے بعد کیا۔ جمعیۃ علماء اسلام (س) کے سربراہ مولانا سمیع الحق نے بھی آج ملک گیر یوم احتجاج کی اپیل کی ہے۔ مولانا محمد عاصم مخدوم نے کہامسلمانوں کے خلاف آئے روز درد ناک واقعات پر تمام مسلمان ممالک متحد ہوجائیں۔ جمعیت علماء پاکستان (نورانی) کے صدر ڈاکٹر صاحبزادہ ابوالخیر محمد زبیر نے ملک گیر یوم احتجاج کا اعلان کرتے ہوئے گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ سنی اتحاد کونسل پاکستان کے چیئرمین صاحبزادہ محمد حامد رضا نے آج یوم احتجاج کا اعلان برطانیہ سے سنی اتحاد کونسل پنجاب کے جنرل سیکرٹری مفتی محمد سعید رضوی سے ٹیلی فونک گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ سربراہ سنی تحریک محمد ثروت اعجاز قادری کی اپیل پر بھی آج ملک بھر میں یوم مذمت منایا جائے گا۔ اس کا اعلان صوبائی رہنما محمد زاہد حبیب قادری نے کیا۔ تحریک حرمت رسول ﷺپاکستان میں شامل 20سے زائد مذہبی و سیاسی جماعتوںکے چیئرمین مولانا امیر حمزہ کی زیر صدارت مرکز القادسیہ میں منعقدہ ایک اجلاس میں ملک گیر سطح پر بھرپور تحریک چلانے کا اعلان کیا۔ اس موقع پر علامہ ابتسام الہٰی ظہیر، حافظ عبدالغفار روپڑی، علامہ احمد علی قصوری، مولانا محمد امجد خاں، امیر العظیم، مرزا ایوب بیگ، شیخ نعیم بادشاہ، قاری محمد یوسف احرار، حافظ محمد مسعود و دیگر نے بھی خطاب کیا۔ اجلاس میں جماعۃالدعوۃ، جماعت اسلامی، جے یو آئی(ف)،جمعیت اہلحدیث، تنظیم اسلامی، جماعت اہلحدیث، جمعیت علماء پاکستان(نیازی)،مجلس احرار پاکستان، مرکز اہلسنت پاکستان،متحدہ جمعیت اہلحدیث، تحریک آزادی جموں کشمیر، ہیومن رائٹس فار جسٹس اینڈ پیس، پاکستان واٹر موومنٹ، المحمدیہ سٹوڈنٹس و دیگر جماعتوں کے رہنمائوںنے شرکت کی۔تحریک صراط مستقیم پاکستان کے زیر اہتمام گستاخانہ خاکوں کے خلاف ریلی نکالی گئی جو پنجاب اسمبلی سے شروع ہوکر امریکی سفارتخانہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوئی۔ علماء و مشائخ نے امریکی سفارتخانہ میں احتجاجی یادداشت بھی پیش کی، ریلی میں سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔ حرمت رسولؐ لائرز فورم اور الامہ لائرز فورم کے زیر اہتمام جی پی او چوک میں وکلائ، سول سوسائٹی اور سماجی کارکنوں نے احتجاجی مظاہرہ کیا۔