انتہا پسندی کا خاتمہ گولی نہیں تعلیم صحت اور روزگار کے مواقع سے کیا جا سکتا ہے : شہباز شریف

انتہا پسندی کا خاتمہ گولی نہیں تعلیم صحت اور روزگار کے مواقع سے کیا جا سکتا ہے : شہباز شریف

لاہور (خصوصی رپورٹر) وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کہا ہے کہ شعبہ طب سے وابستہ افراد کسی بھی معاشرے میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ پنجاب حکومت نے سینئر و ینگ ڈاکٹرز، نرسز اور پیرامیڈیکل سٹاف کے پے پیکیج کو انتہائی بہتر کیا ہے۔ سیلاب ہو یا زلزلہ یا کوئی اور قدرتی آفت، پاک افواج کی خدمات ہمیشہ قابل قدر رہی ہیں اور پاک فوج کا میڈیکل کالج بھی شعبہ طب میں گرانقدر خدمات سرانجام دے رہا ہے۔ پاکستان تاریخ کے مشکل ترین دور سے گزر رہا ہے اور ملک کو توانائی بحران اور انتہاپسندی کے چیلنجز کا سامنا ہے جس سے مشترکہ کوششوں سے نمٹا جاسکتا ہے۔ انتہاپسندانہ رجحانات کا خاتمہ صرف بندوق کی گولی سے نہیں بلکہ تعلیم، صحت اور روزگار کے مواقع عام کرکے کیا جا سکتا ہے۔ شہباز شریف نے ان خیالات کا اظہار سی ایم ایچ میڈیکل کالج اینڈ انسٹی ٹیوٹ آف ڈینٹسٹری  لاہور کے دوسرے کانووکیشن کی تقریب سے خطاب میں کیا۔ وزیراعلیٰ نے گریجوایٹ ڈاکٹرز میں گولڈمیڈل تقسیم کئے اور انہیں مبارکباد دی۔ وزیراعلیٰ نے سی ایم ایچ میڈیکل کالج کیلئے 5 کروڑ روپے کی گرانٹ کا اعلان بھی کیا۔ کور کمانڈر لاہور لیفٹیننٹ جنرل نوید زمان نے شہباز شریف کو کالج کی شیلڈ پیش کی۔ شہباز شریف نے تقریب سے خطاب میں کہا کہ پاک افواج نے دکھی انسانیت کی خدمت کیلئے لاہور میں سی ایم ایچ میڈیکل کالج بنا کر عظیم کارنامہ سرانجام دیا ہے جس پر پاک افواج مبارکباد کی مستحق ہے۔   ملک کی تعمیر و ترقی میں پاک افواج کے متعلقہ ادارے بھی سویلین اداروں کے ساتھ برابر کے شریک رہے ہیں، 2010ء کا بدترین سیلاب ہو یا کوئی اور قدرتی آفت یا زلزلہ، پاک افواج نے سویلین کے ساتھ مل کر انتہائی قابل قدر خدمات سرانجام دی ہیں جس پر پوری قوم کو فخر ہے۔ سی ایم ایچ میڈیکل کالج میں پنجاب حکومت نرسوں کو تربیت دلوائے گی اور اس سلسلے میں انہیں ٹرانسپورٹ اور رہائش کی سہولتیں بھی فراہم کی جائیں گی۔ صحت مند معاشرہ ہی ترقی کرتا ہے جبکہ بیمار معاشرہ ترقی کی دوڑ میں پیچھے رہ جاتا ہے۔ پنجاب حکومت صوبے میں تعلیم اور صحت کے شعبوں کی بہتری کیلئے اربوں روپے کے وسائل فراہم کر رہی ہے۔ افواج پاکستان ملک میں انتہاپسندی کے خاتمے اور سکیورٹی کی صورتحال کو یقینی بنانے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہیں۔ انتہاپسندی کے رجحانات کے خاتمے کیلئے سماجی و معاشی اقدامات اٹھانا انتہائی ضروری ہے اور سوات آپریشن اس کی ایک مثال ہے جہاں پر پاک افواج نے کامیاب آپریشن کیا اور پھر سماجی و معاشی اقدامات کے ذریعے لوگوں کو بااختیار بنایا گیا۔ میڈیا سے گفتگو میں شہباز شریف نے کہا کہ تعلیم اور صحت کے شعبوں کو بہتر بنانے کیلئے شب و روز کوشاں ہیں اور ہم معاشرے میں تحمل، برداشت اور اتحاد کے جذبات کو فروغ دینے کیلئے اقدامات اٹھا رہے ہیں۔ شہباز شریف نے یوتھ فیسٹول میں دنیا کا سب سے بڑا انسانی پرچم بنانے کاریکارڈ قائم ہونے پر قوم کو مبارکباد دی ہے۔