مہنگائی، لوڈشیڈنگ سے عوام مشکلات کا شکار، مسائل حل کرینگے: راحیلہ بلوچ

لاہور (رفیعہ ناہید اکرام) وزیر مملکت راحیلہ بلوچ نے کہا ہے کہ ہرمرتبہ پیپلزپارٹی کی حکومت پر کرپشن کے الزامات لگے مگرالزامات عائد کرنے والے انہیں ثابت بھی تو کریں، ملک کو ڈکٹیٹرشپ نے بہت نقصان پہنچایا، مشرف کالاباغ ڈیم بنا دیتے تو آج عوام مسائل کا شکار نہ ہوتے، کراچی کے حالات سنوارنے کیلئے حکومت کے پاس الٰہ دین کا چراغ یا جادوئی چھڑی نہیں، شہباز شریف کو چاہئے تھاکہ صدر زرداری کو لاہور میںریسیوکرتے انہوںنے ایسا نہ کرکے غلطی کی، حلف اٹھانے کے بعد نوائے وقت سے گفتگو میں انہوں نے کہا کہ مجھ پر جس اعتماد کا اظہار کیا میں اس پر ہرممکن پورا اترنے کی کوشش کروں گی۔ انہوں نے کہا کہ میرے والد شہادت علی خان کا شمار پیپلز پارٹی کے سینئر رہنماو¿ں اور بھٹو مرحوم کے قریبی ساتھیوں میں ہوتا ہے، میرا تعلق تاندلیانوالہ ضلع فیصل آبادسے ہے، میںنے بینظیر بھٹو سے بہت کچھ سیکھا، ان سے کئی مرتبہ ملاقات ہوئی، وہ انتہائی مدبر سیاستدان تھیں، ان جیسا وژن پاکستان کے کسی اور سیاستدان کے پاس نہیں، یہ کہنا درست نہیں کہ یہ پارٹی اب بھٹو کی پارٹی نہیں رہی تاہم انہوں نے کہا کہ جس طرح کسی گھر کے سرپرست کے انتقال کے بعد کچھ نہ کچھ تبدیلی آتی ہے اسی طرح پیپلز پارٹی میں بھی آئی، صدر زرداری نے بہت سے اچھے اقدام کئے، اگر انکی جگہ کوئی اور ہوتا تو حکومت چار سال تک نہیں چل سکتی تھی مگراب پیپلز پارٹی کی حکومت پانچ سال پورے کرے گی۔ جب بھٹو مرحوم کے بعد بی بی آئیں تو بھٹوکے ساتھیوں کو بھی کچھ اعتراضات ہوئے مگر بی بی نے ثابت کیا کہ وہ بھٹو کے فلسفے کی امین ہیں، مہنگائی اور لوڈ شیڈنگ کے باعث عوا م مشکلات کا شکار ہیں، بھارت سے بجلی برآمد کرنے سمیت عوام کی بہتری کیلئے جو بھی ہوسکا کریں گے۔ پاکستان میں روزگار کے مواقع میں اضافہ نہ ہونے کے باعث عوامی مشکلات میں اضافہ ہوا جس کے خاتمے کیلئے عوامی حکومت کوشاں ہے۔ پاکستان میں حالات کی خرابی نئی بات نہیںتاہم حالات اس قدر خراب ہیں کہ کوئی اور بھی آجائے گا تو کیا کرلے گا، امریکہ کوڈرون حملے روکنا ہونگے، ہم بھکاری نہیںامریکہ ہمیں خدمات کا معاوضہ دے، مستحکم افغانستان پاکستان کے مفاد میں ہے۔ تحریک انصاف کی طرف سے سونامی کی بات کرنا غلط ہے، یہ خوش آئند ہے کہ سونامی چند دن کی بات تھی، جو ساحل سے ٹکرائے بغیر ہی واپس چلاگیا ہے۔ انہوں نے نوائے وقت کے ایڈیٹر انچیف مجید نظامی کی ادارت کے پچاس برس مکمل ہونے پرانہیں مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ مجید نظامی کی خدمات کا ذکر کرنا چھوٹا منہ بڑی بات کے مترادف ہے۔ انہوںنے صحافت کو مشن بنایا اور عمر بھر اس پر کاربند رہے، ان کو جتنا بھی خراج تحسین پیش کیا جائے کم ہے، خدا انہیں عمر خضر سے نوازے۔