وزیر اعظم میاں نواز شریف نے پرائیویٹ پاور انفراسٹرکچر بورڈ کو ہدایت کی ہے کہ پاور پلانٹس کے حوالے سے زیر التواء کیسز کی منظوری جلد کی جائے یہ بات انہوں نے صدر مملکت کے ہمراہ بزنس کمیونٹی کے نمائندہ وفد سے ملاقات کے دوران کہی

وزیر اعظم میاں نواز شریف نے پرائیویٹ پاور انفراسٹرکچر بورڈ کو ہدایت کی ہے کہ پاور پلانٹس کے حوالے سے زیر التواء کیسز کی منظوری جلد کی جائے یہ بات انہوں نے صدر مملکت کے ہمراہ بزنس کمیونٹی کے نمائندہ وفد سے ملاقات کے دوران کہی

وزیر اعظم ہائوس کی طرف سے جاری کردہ اعلامیے کے مطابق بزنس کمیونٹی کے نمائندہ وفد نے صدر اور وزیراعظم سے ملاقات کی اور مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا ملاقات کے دوران وزیر اعظم میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ بزنس کمیونٹی کو سہولیات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیح ہے اسوقت ملک کو دہشت گردی اور توانائی کے بحران جیسے بحرانوں کا سامنا ہے جن سے نمٹنے کےلئے تمام ضروری اقدامات کر رہے ہیں ان کا کہنا تھا کہ بجلی کی پیداوار میں ڈیمانڈ کے مطابق اضافہ حکومت کی اولین ترجیح ہے اور ایل این جی کی درآمد شروع ہونے سے توانائی کے بحران پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔حکومت کی اقدامات کی وجہ سے معیشت بہتر ہو رہی ہے اور ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں بھی استحکام آیا ہے،دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے آئین اور آرمی ایکٹ میں ترامیم کیں اور فوجی عدالتوں کا قیام عمل میں لایا گیا فرقہ وارانہ نفرت پھیلانے اور دہشت گردوں کے کیسز کا ٹرائل ملٹری کورٹس میں کریں گے جلد انصاف ملنے سے حالات میں بہتری آئے گی ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خاتمے کے آپریشن ضرب عضب شروع کیا گیا ہے اور اسکی کامیابی سے ملک میں امن ہو گا،اس موقع پر وزیر اعظم کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ بیرون ملک پاکستانی مجموعی طور پر پچیس ارب ڈالر سالانہ پاکستان بھیجتے ہیں جبکہ چین کے ساتھ ایف ٹی اے کے دوسرے مرحلے کےلئے مذاکرات جاری ہیں بزنس کمیونٹی سے ملاقات سے قبل صدر اور وزیر اعظم کے درمیان ون آن ون ملاقات بھی ہوئی جس میں ملک کی مجموعی سیاسی ،معاشی اور اقتصادی صورتحال کا جائزہ لیا گیا