بھارتی قیادت کے جنگی جنون کے باوجود سینکڑوں سکھ مذہبی رسومات کی ادائیگی کے لیے پاکستان پہنچ گئے

خبریں ماخذ  |  خصوصی نامہ نگار
بھارتی قیادت کے جنگی جنون کے باوجود سینکڑوں سکھ مذہبی رسومات کی ادائیگی کے لیے پاکستان پہنچ گئے

واہگہ بارڈر کے راستے پاکستان آتے سکھوں کے یہ جتھےآئے تو مذہبی رسومات کی ادائیگی کے لیے ہیں لیکن یہاں آکر ان کی برسوں پرانی خواہش کی تکمیل بھی ہو گئی ہے پاکستان کی سرزمین ان کے لیے مقدس حیثیت بھی رکھتی ہےصرف اس لیے نہیں کہ ان کے مذہبی مراکز یہاں پر ہیں بلکہ اس لیے بھی کہ یہ ان کے آباواجداد کی دھرتی ہےکئی سکھ اپنے آبائی شہروں کو دیکھ نہ پانے پر آبدیدہ بھی ہو گئے-

چھے سو کے قریب سکھ یاتری چھے دن پاکستان میں قیام کریں گے اورپانچویں سکھ گرو گرو ارجن دیو کے چار سونویں شہیدی دن کی تقریبات میں شرکت کریں گے ، سکھ یاتریوں کا کہنا ہے کہ بھارتی عوام کی اکثریت امن سے رہنا چاہتی ہے معمولی اقلیت چند وزراء کے جنگی جنون کی حمایت کرتی ہیں-

چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ صدیق الفاروق نے سکھ یاتریوں کا استقبال کیا سکھ یاتری بھی شاندار استقبال کی تعریف کیے بنا نہ رہ سکے-

بھارتی گردوارا پربندھک کمیٹیوں کی جانب سے نانک شاہی کیلنڈر ایشو پر پاکستان میں تقریبات کے بائیکاٹ کے باوجود سکھوں کی بڑی تعداد پاکستان پہنچی ہے جو اپنے ساتھ امن و محبت کا پیغام بھی لائے ہیں-

بھارتی حکومت کے اشتعال انگیز بیانات ک باوجود سکھ یاتریوں کی بڑی تعداد کی پاکستان آمد اس بات کا ثبوت ہے کہ پاکستان میں سکھوں کے مذہبی مقامات کی بھرپور دیکھ بھال اور پاکستانیوں کی محبت بھارتی سکھوں کو پاکستان کھینچ ہی لائی