شفاف انتخابات کیلئے مظاہرے کرتے رہیں گے۔ خیبر پی کے میں بائیو میٹرک سسٹم لا رہے ہیں ۔ عمران خان

شفاف انتخابات کیلئے مظاہرے کرتے رہیں گے۔ خیبر پی کے میں بائیو میٹرک سسٹم لا رہے ہیں ۔ عمران خان

اسلام آباد/ چنیوٹ (نوائے وقت رپورٹ+ ایجنسیاں) تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے ملک میں شفاف انتخابات کیلئے مظاہرے کرتے رہیں گے۔ چار حلقوں کی مکمل تحقیقات ہونگی تو دودھ کا دودھ پانی کا پانی ہو جائے گا۔ اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ 7 ماہ گزر گئے اب تک چار حلقوں میں انگوٹھوں کے نشانات سے ووٹوں کی تصدیق کا عمل مکمل نہیں ہو سکا۔ الیکشن ٹربیونل کارروائی کیلئے آگے بڑھتے ہیں تو حکومتی جماعت ان کے خلاف سٹے آرڈر لے آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن میں بہت بڑی دھاندلی ہوئی، کراچی میں ان کے قومی اسمبلی کے امیدوار زبیر خان کے پاس 70 ہزار ووٹوں کی تصدیق کے پیسے تھے۔ انہوں نے کہا ان میں سے صرف 50 ہزار ووٹوں کی تصدیق ہو سکی۔ ان کا کہنا تھا بقیہ 25 ہزار غیر تصدیق شدہ ووٹوں میں سے 60 فیصد جعلی تھے۔ انہوں نے سوال کیا کیا ووٹوں کی تصدیق نہ کرانے والوں کا احتساب ہو گا، ڈی سی او میانوالی کا خوشاب سے تبادلہ کر دیا گیا، ڈی سی او کا تبادلہ ضمنی انتخابات میں دھاندلی کیلئے کیا گیا، ملکی جمہوریت تباہ کرنے میں کس کا کردار تھا۔ عمران خان نے بتایا ہم خیبر پی کے میں بائیو میٹرک سسٹم لا رہے ہیں، سندھ اور پنجاب میں بائیومیٹرک سسٹم کیوں نہیں لایا جا رہا، پاکستان میں صاف اور شفاف الیکشن کیلئے بہت بڑا مظاہرہ کرینگے، شفاف انتخابات کیلئے ملک بھر میں مظاہرے کرتے رہیں گے۔ چنیوٹ سے آن لائن کے مطابق پی ٹی آئی یوتھ ونگ کے ضلعی صدر اکمل بخاری کی قیادت میں ملنے والے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا ملک میں ہونے والے بلدیاتی انتخابات منی مسلم لیگ کو طاقتور بنانے کا نیا فارمولا بنایا گیا ہے، خادم اعلی پنجاب کا نام استعمال کرنیوالے اب بڑے سیاستدان کا روپ دھار چکے ہیں اور انہوں نے پنجاب کی عوام کو خیر آباد کہتے ہوئے بڑے بھائی کے ساتھ بطور سیکرٹری کام شروع کردیا ہے اور ان کے ساتھ بیرون ملک دوروں پر ہی نظر آتے ہیں۔ انہوں نے کہا گیارہ مئی سے اب تک جتنے بھی بڑے بڑے عہدے دیئے گئے ان میں میاں برادران نے اپنے ہی خاندان کو نوازا جبکہ تحریک انصاف ملک سے موروثی سیاست کا خاتمہ چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا بلدیاتی انتخابات سے قبل قرضہ سکیم کا رنگین ڈرامہ عوام سے ووٹ لینے کا نیا ڈھونگ رچایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا بلدیاتی انتخابات میں تمام اضلاع کے افسران کو یہ حکم دیا گیا ہے کہ وہ 80فی صد مسلم لیگ کے امیدواروں کو کامیاب کرانے میں اپنا کردار ادا کریں ورنہ فیصل آباد کے آفیسرز کے ساتھ ہونیوالا سلوک ان کے ساتھ بھی دوہرایا جاسکتا ہے۔ اے پی اے کے مطابق عمران خان نے کہا عام انتخابات میں بدترین دھاندلی ہوئی ایسے انتخابات کا کیا فائدہ جس سے جمہوریت اور موجودہ حکومت کی ساکھ ہی خراب ہوجائے جب پنجاب میں انگوٹھوں کی تصدیق کا عمل شروع ہوا تو چیرمین نادرا کی ہی چھٹی کردی گئی۔امریکی وزیر دفاع چک ہیگل کا نیٹو سپلائی کو فوجی امداد سے مشروط کرنا حکمرانوں کے لئے سبق ہے کہ بھیک مانگنے والوں کے کوئی حقوق نہیں ہوتے۔ عمران خان نے ایک مرتبہ پھر پنجاب کے چار حلقوں میں انگوٹھوں کے نشانات سے ووٹوں کی تصدیق کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا پاکستان کی جمہوریت کی بقاء اور انتخابی نظام کی اصلاح کے لئے آزاد عدلیہ اور میڈیا کردار ادا کرے۔  عام مئی 2013کے عام انتخابات میں دھاندلی نہیں ہوئی تو حکومت کس چیز سے ڈر رہی ہے۔خیبر پی کے میں انتخابات کو شفا ف بنانے کے لئے بائیو میٹرک سسٹم لا رہے ہیں حکومت اس نظام کو پورے ملک میں رایج کرے تاکہ انتخابات میں دھاندلی کو ختم کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا وفاقی حکومت قومی اسمبلی کے چار حلقوں میں انگوٹھوں کے نشان سے ووٹوں کی تصدیق کے عمل کو یقینی بنائے اور لاہور کے دو ،سیالکوٹ اور لودھراں کے ایک ایک حلقے میں ووٹوں کی تصدیق کا مطالبہ پورا کرے۔