چیف جسٹس آف پاکستان افتخارمحمد چوہدری نے کہا ہے کہ وکلاء نے آئین کی پاسداری کا جو بیڑہ اٹھایا ہے وہ اس ملک و قوم کے عروج کا سبب بنے گا۔

چیف جسٹس آف پاکستان افتخارمحمد چوہدری نے کہا ہے کہ وکلاء نے آئین کی پاسداری کا جو بیڑہ اٹھایا ہے وہ اس ملک و قوم کے عروج کا سبب بنے گا۔

کراچی بارایسوسی ایشن میں نومنتخب عہدیداروں کی حلف برداری کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس افتخارمحمد چوہدری نے کہا کہ وکلاء کی مدد کے بغیرعدالتیں جلد فیصلے نہیں سنا سکتیں۔ لوگوں کو فوری اورسستا انصاف فراہم کرنا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے کہا کہ قومی عدالتی پالیسی کے تحت عدالتی افسروں کو بااختیاربنانے اورانہیں انتظامیہ سےعلیحدہ کرنے کے لئے جامع پالیسی وضع کی گئی ہے، ان کا کہنا تھا کہ اعلٰی عدلیہ کے ججز صاحبان نے بھی اس بات کا اعادہ کیا ہے کہ وہ کسی بھی انتظامی عہدے پرتعینات نہیں ہوں گے۔ چیف جسٹس نے واضح کیا کہ ملکی اداروں نے حقیقی معنوں میں اپنے فرائض سرانجام دینے شروع کردیئے ہیں۔ اپنے خطاب سے پہلے چیف جسٹس افتخارمحمد چوہدری نے کراچی بار کے نومنتخب صدرمحمد عاقل سمیت دیگرعہدے داروں سے حلف لیا اس موقع پر وکلاء کی جانب سے چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ کو گلدستے پیش کئے گئے ۔