قومی اسمبلی میں امریکی صدر کے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے خلاف مشترکہ مذمتی قرارداد اتفاق رائے سے منظور

خبریں ماخذ  |  ویب ڈیسک
قومی اسمبلی میں امریکی صدر کے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے خلاف مشترکہ مذمتی قرارداد اتفاق رائے سے منظور

قومی اسمبلی نے امریکی صدر ٹرمپ کی طرف سے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کرنے کو عالم اسلام پر براہ راست حملہ قرار دیتے ہوئے امریکی اقدام کے خلاف مشترکہ مذمتی قرارداد اتفاق رائے سے منظور کر لی جمعرات کو ایوان کی معمول کی کاروائی کو معطل کر کے اس مسئلے پر بحث کروائی گئی ۔وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان چوہدری برجیس طاہر نے امریکی صدر کے متذکرہ اعلان کے خلاف پاکستان کی تمام پارلیمانی جماعتوں کی مشترکہ قرارداد ایوان میں پیش کی ،قرارداد میں کہا گیا ہے کہ یہ ایوان امریکی صدر ٹرمپ کی طرف سے یروشلم کو اسرائیل کا نام نہاد دارلحکومت تسلیم کرنے کی مذمت کرتا ہے، امریکی سفارتخانہ منتقل کرنے کے اعلان کی مذمت کرتے ہیں ،یہ امریکی اعلان امت مسلمہ پر براہ راست حملہ ہے ،ایسے وقت میں جب مشرق وسطٰی میں انتشار کی صورتحال ہے امریکہ نے تمام عالمی قوانین اور اقوام متحدہ کی مسئلہ فلسطین پر 8سے زائد قراردادوں سے انحراف کرتے ہوئے متذکرہ اعلان کر دیا ہے، نیشنل اسمبلی آف پاکستان مطالبہ کرتی ہے کہ اقوام متحدہ کے منشور قراردادوں کے نفی میں امریکہ اپنا یہ اقدام واپس لے ،قرار داد کو اتفاق رائے سے منظور کر لیا گیا۔