کرائے کے قاتلوں کو معاف نہیں کریں گے‘ کراچی میں فوج طلب کر سکتے ہیں : رحمن ملک

پشاور + کراچی (بیورو رپورٹ + ایجنسیاں+ ریڈیو نیوز) وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک نے کہا ہے کہ دہشت گردوں کےخلاف سخت کارروائی کرنے جا رہے ہےں، ضرورت پڑی تو کراچی مےں فوج طلب کر سکتے ہےں، آئندہ 24گھنٹے مےں اہم فیصلے کئے جائینگے کرائے کے قاتلوں کو کسی صورت معاف نہیں کرینگے، طالبان پختونوں کا نام استعمال کر کے اعلیٰ شخصیات کو نشانہ بنا رہے ہےں کراچی مےں پختونوں کا جو بھی قتل ہوا اس کی تحقیقات کر رہے ہےں غیر ریاستی عناصر ملک مےں انارکی پھیلانے کی کوشش کر رہے ہےں۔ کراچی مےں پرتشدد واقعات کی تحقیقات کرائی جائینگی اور نقصانات کا تخمینہ لگا کر اس کا ازالہ کیا جائے گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پشاور ایئرپورٹ پر اور کراچی پہنچنے پر میڈیا سے گفتگو، کراچی مےں اے این پی کے رہنما شاہی سید سے ملاقات کے بعد صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کیا، رحمن ملک ایم کیو ایم کے رہنماﺅں سے ملاقات کےلئے گورنر سندھ عشرت العباد کے ہمراہ نائن زیرو عزیز آباد پہنچ گئے جہاں انہوں نے ایم کیو ایم کی رابطہ کمیٹی کے ارکان سے ملاقات کی۔ پشاور مےں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رحمن ملک نے کہا کہ دہشت گردوں نے اپنی حکمت عملی بدلی ہے ہم بھی بدل رہے ہیں۔ صفوت غیور نڈر بےباک اور دلیر کمانڈنٹ تھے۔ انہوں نے اپنی جان کی پرواہ نہ کرتے ہوئے دہشت گردی کیخلاف جنگ لڑی ہے۔ طالبان فرقہ واریت اور قوم پرستی کو ہوا دے رہے ہےں، ہم دہشت گردوں کیخلاف آخری دم تک لڑیں گے۔ خیبر پی کے میں پولیس کی تعداد میں اضافہ کیا ہے اور ان کی استعداد کار میں بھی اضافہ کررہے ہیں۔ کراچی میں امن وامان کی صورتحال کو بہتر بنانے کیلئے اے این پی اور ایم کیو ایم کی قیادت سے بات چیت ہوئی ہے، جلد کراچی میں امن قائم ہوگا۔ کراچی مےں گفتگو کرتے ہوئے رحمن ملک نے کہا کہ ٹارگٹ کلنگ کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی، دہشت گردوں اور کرائے کے قاتلوں کو وارننگ دیتا ہوں کہ وہ ٹارگٹ کلنگ سے باز آجائیں۔ وزیراعظم آج کراچی آرہے ہےں کراچی مسئلے کے حل کےلئے تمام سیاسی جماعتوں سے بات کی جائے گی۔ شہر کراچی کا امن تباہ کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کریں گے۔ کراچی کو اسلحہ سے پاک کرنے کےلئے مختلف علاقوں مےں آپریشن کریں گے، کراچی مےں آئندہ 48گھنٹوں مےں تبدیلی نظر آئےگی۔ علاوہ ازیں متحدہ کی رابطہ کمیٹی کے ارکان کے ساتھ ملاقات کی، پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے رحمن ملک نے کہا کہ ایم کیو ایم کے ایم پی اے حیدر رضا کی ناگہانی شہادت ایک انتہائی افسوسناک واقع ہے، ایسے واقعات ملک کو غیر مستحکم کرنے کےلئے رونما کئے جاتے ہےں۔ سکیورٹی ایجنسیاں، پولیس، رینجرز اور اپنے اپنے طور پر تفتیش کر رہے ہےں جبکہ ایک انویسٹی گیشن کمیٹی بھی بنائی جا چکی ہے جو اپنا کام انتہائی تیزی سے کر رہی ہے، ہم کوشش کر رہے ہےں اس واقع کی جوڈیشل سطح پر بھی تفتیش کی جائے، میری الطاف حسین سے بھی تفصیلی ملاقات ہوئی الطاف حسین نے اپنے ساتھی کی جدائی کے صدمہ کو برداشت کرتے ہوئے جتنی دلیری کا مظاہرہ کیا اور اپنے کارکنوں کو صبر کی تلقین کرتے ہوئے پرامن رہنے کی اپیل کی ہم اسے قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہےں۔ ہمارے لئے ہر ایک بندہ اور ہر معصوم شہری اتنا ہی اہم ہے جتنا کوئی بڑا آدمی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا اور الطاف بھائی کا یہی پیغام ہے کہ ہم نے تمام پاکستانیوں کو امن دینا ہے، اب وقت ہے کہ ایسے افراد جو اپنے ملک کے خلاف دشمنوں کے مقاصد کی تکمیل مےں لگے ہوئے ہےں جو پاکستان کو غیر مستحکم کر کے پاکستان کو تباہ کرنا چاہتے ہےں ہم نے سب کے ساتھ مل کر ایسے عناصر کا خاتمہ کرنا ہے۔ انہوں نے اس موقع پر اعلان کیا کہ حیدر رضا کے ایک صاحبزادے کو ایف آئی اے مےں ملازمت دی جائے گی۔ اے این این کے مطابق رحمن ملک ایم کیو ایم اور عوامی نیشنل پارٹی کے درمیان مفاہمت کرانے اور قیام امن کےلئے کراچی پہنچے اور نائن زیرو مےں ایم کیو ایم کے رہنماﺅں اور مردان ہاﺅس مےں عوامی نیشنل پارٹی کے رہنماﺅں سے ملاقاتیں کیں اور رضا حیات کے گھر جا کر اہل خانہ سے تعزیت کی۔ علاوہ ازیں رحمن ملک نے شاہی سید سے ملاقات کے بعد اخبار نویسوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی دہشت گرد سزا سے نہیں بچ سکے گا اور ہم ایسے افراد کو کیفر کردار تک پہنچا کر رہیں گے۔ کراچی کے بہن بھائیوں سے اپیل کرتے ہےں کہ وہ صبر سے کام لیں اور پرامن رہیں، تسلیم کرتا ہوں کہ چند برے لوگ حالات سے فائدہ اٹھا رہے ہےں۔