خامیوں کیوجہ سے فی الوقت آن لائن سسٹم بند کر دیا‘ وکیل سکینڈری بورڈ‘ پنجاب حکومت تجربے کہیں اور جا کر کے‘ بچوں کے مستقبل سے نہیں کھیلنے دیں گے: ہائیکورٹ

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شیخ عظمت سعید نے انٹرمیڈیٹ اور میٹرک کے امتحانات کے لئے آن لائن سسٹم کے خلاف دائر درخواست کے دوران اپنے ریمارکس میں کہا ہے کہ آپ اس طرح کے تجربے کر کے بچوں کے مستقبل سے کھیل رہے ہیں۔ ہمیں بچوں کا مستقبل بہت عزیز ہے جنہوں نے بچوں کے مستقبل کے ساتھ کھیلا انہیں معاف نہیں کیا جائے گا۔ فاضل عدالت نے پنجاب بھر کے تمام تعلیمی بورڈز سے آن لائن سسٹم کا ناکام تجربہ کرنے والے افسروں اور اہلکاروں سے متعلق تحریری رپورٹ طلب کرتے ہوئے مزید سماعت 12 دسمبر تک ملتوی کر دی ہے۔ گذشتہ روز سیکنڈری بورڈ انتظامیہ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ہم اعتراف کرتے ہیں کہ آن لائن سسٹم کے باعث طلبا اور ان کے والدین کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ یہ نظام خامیوں سے بھرپور تھا جسے بیوروکریسی نے مخصوص مقاصد پورے کرنے کے لئے نافذ کیا جبکہ آن لائن سسٹم سے جو توقعات تھیں وہ پوری نہیں ہو سکیں‘ اس لے فی الوقت آن لائن سسٹم بند کر دیا ہے اور اس میں خامیوں اور غلطیوں کو دور کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ جس پر فاضل عدالت نے مزید سماعت ملتوی کر دی۔ آئی این پی کے مطابق جسٹس شیخ عظمت سعید نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ پنجاب حکومت اپنے تجربے کہیں اور جا کر کرے‘ بچوں کو تعلیمی نقصان پہنچانے والوں سے سختی سے نمٹا جائے گا۔ این این آئی کے مطابق فاضل عدالت نے کہا کہ کسی کو بچوں کے مستقبل سے کھیلنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔