خاکوں کی اشاعت میں ملوث افراد کو سزا ملنے تک احتجاج جاری رکھیں گے:تحریک حرمت رسول

لاہور (خصوصی نامہ نگار) گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کیخلاف ملک بھر میں احتجاج کا سلسلہ جاری ہے، مرکز القادسیہ میں جماعة الدعوة کے زیرانتظام علماءکا اجلاس ہوا جس مےں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت میں ملوث افراد کو سزا ملنے تک تحریک حرمت رسول ﷺ جاری رکھنے کا عزم کیا گیا۔ تحریک حرمت رسول ﷺ کی لاہور اورفیصل آباد میں حرمت رسول ﷺ کانفرنسیں ہوئیں۔ تفصیلات کے مطابق خاکوں کی اشاعت کے خلاف گزشتہ روز مرکز القادسیہ چوبرجی میں جماعة الدعوة پاکستان کے مرکزی رہنما حافظ سیف اللہ منصورکی زیر صدارت علمائے کرام کا ایک اجلاس ہوا جس میں ملک بھر میں تحفظ حرمت رسول ﷺ کے لئے جاری تحریک کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں جماعة الدعوة کے مرکزی رہنما رانا شمشاد سلفی، مفتی عبدالرحمان عابد، خالد سیف الاسلام، ابو احسان، عبدالعزیز المدنی سمیت ملک بھر سے علمائے کرام نے شرکت کی، اجلاس سے جماعة الدعوة کے مرکزی رہنما حافظ سیف اللہ منصورنے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ طلبائ، وکلائ، تاجروں سمیت تمام تر شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے خلاف سراپا احتجاج ہیں لیکن حکمرانوں کی طرف سے تحفظ حرمت رسول ﷺ کے لئے وہ کردار دیکھنے میں نہیں آرہا جو انہیںادا کرنا چاہئے۔ خاکوں کے مسئلے پر مسلم حکمرانوں کی خاموشی قابل افسوس ہے۔ جامع مسجد محمدیہ کالا خطائی روڈ لاہور میں جماعة الدعوة کی حرمت رسول ﷺ کانفرنس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی، کانفرنس سے مولانا قاری مزمل رشید، مولانا بلال احمد قریشی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے مسئلہ پر اقوام متحدہ، او آئی سی اور دیگر عالمی اداروں کی مجرمانہ خاموشی افسوسناک ہے، فیصل آباد میں ہونے والی حرمت رسول کانفرنس سے جماعة الدعوہ کے مرکزی رہنما حافظ عبدالرحمان مکی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ صلیبی و یہودی نبی اکرم ﷺ کی شان اقدس میں گستاخیوں سے باز نہ آئے تو انہیں اس کے سنگین نتائج بھگتنا پڑیں گے۔ جامع مسجد رحمانیہ غلام محمد آباد فیصل آباد،جامع مسجد عمر فاروق نبی73ر۔ب کھرڑیانوالا میں ہونے والی حرمت رسول کانفرنسوں سے مولانا غلام قادر سبحانی، حافظ بنیامین عابد نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی قوم سرتو کٹا سکتی ہے لیکن تحفظ حرمت رسول کے فریضہ کو ادا کرنے سے پیچھے نہیں ہٹ سکتی۔