بھارتی آبی جارحیت : واٹر موومنٹ تحریک تیز کرے گی‘ ایگری فورم نے ”بیداری کسان“ مہم کا فیصلہ کرلیا

لاہور (خصوصی نامہ نگار +نیوز رپورٹر) پاکستان واٹر موومنٹ نے بھارتی آبی جارحیت کے خلاف تحریک کو مزید تیز کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے ملک بھر میں جلسے، سیمینارز اور کانفرنسوں کا سلسلہ جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ ایگری فورم پاکستان نے بھارتی آبی جارحیت کےخلاف کسانوں مےں شعور پیدا کرنے کےلئے ملک گیر ”بیداری کسان“ مہم شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ تحریک کے دوسرے دور میں آبی ماہرین اور دیگر دینی و سیاسی جماعتوں کو بھی پروگراموں میں شریک کیا جائے گا۔ پاکستان واٹر موومنٹ کے کنوینئر حافظ سیف اللہ منصور کی زیر صدارت مرکز القادسیہ میں گزشتہ روز ایک اجلاس ہوا جس میں بھارتی آبی دہشت گردی کے خلاف ملک گیر تحریک کے سلسلہ میں اہم فیصلے اور آئندہ کا لائحہ عمل طے کیا گیا۔ اجلاس میں پاکستان واٹر موومنٹ کے جنرل سیکرٹری محمد اشفاق، نگران میڈیا کمیٹی واٹر موومنٹ محمد یحییٰ مجاہد، ڈاکٹر ابو وقاص، حافظ خالد ولید، مزمل اقبال ہاشمی، قاضی کاشف نیاز،علی عمران شاہین و دیگر نے شرکت کی۔ اس موقع پر حافظ سیف اللہ منصور نے کہا کہ بھارت کارگل کے مقام پر دنیا کا دوسرا بڑا ڈیم بنا رہا ہے جس کی تعمیر پاکستان کے لئے انتہائی خطرناک ہے یہ ڈیم بننے سے بھارت اس پوزیشن میں ہوگا کہ وہ جب چاہے پانی چھوڑ کر اسلام آباد کو ڈبو دے حکومت پاکستان کو پاکستانی دریاﺅں پر بھارتی ڈیموں کی تعمیرپر کسی صورت خاموشی اختیار نہیں کرنی چاہئے۔ علاوہ ازیں ایگری فورم پاکستان نے بھارتی آبی جارحیت کے خلاف کسانوں مےں شعور پیدا کرنے کےلئے ”بیداری کسان“ ملک گیر مہم شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ بڑی سیاسی جماعتیں بھارتی ”سوفٹ امیج“ ختم کرنے کےلئے ملک گیر ریلیاں بھی نکالیں گی۔ ایگری فورم پاکستان کے چیئرمین ابراہیم مغل کی صدارت مےں خصوصی اجلاس ہوا جس مےں پنجاب کے 35ضلعی صدور سمیت دیگر کسان تنظیموں نے بھی شرکت کی۔ ابراہیم مغل نے کہا کہ بھارت نے ہمارے دریاﺅں کا پانی روک کر پاکستان کو قحط سالی کے خطرے سے دوچار کر دیا دوسری طور حکام بالا کی خاموشی نے بھی کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔