سخت عوامی ردعمل کے بعد وزیراعظم کا حکم: پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ واپس

سخت عوامی ردعمل کے بعد وزیراعظم کا حکم: پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ واپس

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی + نوائے وقت رپورٹ) سخت عوامی ردعمل کے بعد وزیراعظم راجہ پرویز اشرف نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کا نوٹس لیتے ہوئے انہیں واپس لینے کا حکم جاری کیا۔ اس حکم کے بعد اوگرا نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے۔ اس نوٹیفکیشن کے مطابق پٹرول کی قیمت میں تین روپے 53 پیسے فی لٹر کمی کی گئی اور اس کی قیمت 103 روپے 70 پیسے فی لٹر مقرر کی گئی ہے۔ ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں چار روپے 35 پیسے کمی ہوئی جس کے بعد نئی قیمت 109 روپے 21 پیسے ہو گی، مٹی کے تیل کی قیمت میں 3 روپے 79 پیسے کمی کی گئی، نئی قیمت 99 روپے 90 پیسے فی لٹر ہو گی، لائٹ ڈیزل کی قیمت میں 3 روپے 93 پیسے کمی کے بعد نئی قیمت 98 روپے 26 پیسے لٹر ہو گی۔ وزارت پٹرولیم کے مطابق قیمتوں میں کمی کے لئے پٹرولیم لیوی کم کی گئی ہے، نئی قیمتوں کا اطلاق رات 12 بجے کے بعد ہو گیا ہے۔ اس سے قبل وزیر خزانہ سلیم ایچ مانڈوی والا سے ملاقات کے دوران وزیراعظم نے قیمتوں میں حالیہ اضافہ فوری طور پر واپس لینے کا حکم دیا۔ وزیر خزانہ نے ملک کی مجموعی اقتصادی صورتحال کے حوالے سے وزیراعظم کو بریفنگ دی اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمت میں اضافہ کے حوالے سے مجبوریوں اور تفصیلات سے آگاہ کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ اس حالیہ اضافہ سے عوام کی زندگیاں بری طرح متاثر ہوئی ہیں۔ جمہوری حکومت عوام پر کسی بھی اضافی بوجھ کو برداشت نہیں کر سکتی، حکومت کو زیادہ سے زیادہ ریلیف کی فراہمی پر یقین رکھتی ہے۔ حکومت عوام کی فلاح وبہبود اور ویلفیئر پر پختہ یقین رکھتی ہے، عوام کی سہولیات میں اضافہ کیلئے پالیسی سازی کا عمل جاری رہے گا۔ عوام کی حکومت عوام پر اضافی بوجھ نہیں ڈالنا چاہتی اور عوام کو زیادہ سے زیادہ سہولتوں کی فراہمی کے حوالے سے تمام تر اقدامات کئے جائیں گے۔ عوام کی فلاح حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ عوام پہلے ہی مہنگائی سے پریشان ہیں۔ جمہوری حکومت کا کام عوام کو مسائل سے چھٹکارا دلانا ہے اور عام آدمی کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ یہ اضافہ واپس لیا جائے کیونکہ اس سے عام شہریوں کو شدید مشکلات پیش آ رہی ہیں۔ ذرائع کے مطابق ایک روز قبل صدر زرداری کو بھی وفاقی وزرا نے پٹرولیم مصنوعات میں اضافے پر اپنے اپنے تحفظات سے آگاہ کیا تھا اور انتخابات سے قبل اضافے کی مخالفت کی تھی۔ ذرائع کے مطابق صدر، وزیراعظم کی ملاقات میں وفاقی وزرا نے اضافے کو غلط قرار دیا تھا۔ وزرا نے صدر اور وزیراعظم کو اس فیصلے پر سخت عوامی ردعمل سے بھی آگاہ کیا۔ اس کے بعد مشیر پٹرولیم ڈاکٹر عاصم حسین نے کہا کہ وزارت پٹرولیم نے قیمتوں میں کمی کر دی ہے اور قیمتوں میں کمی پٹرولیم لیوی میں ایڈجسٹ کی جا رہی ہے۔ پٹرولیم قیمتیں 28 فروری کی سطح پر آ جائیں گی۔