طاہر القادری سے ملاقات‘ انقلاب مارچ کی تاریخ کا اعلان آج ہو گا‘ بڑی خبر دینگے : شجاعت‘ پرویز الہی

طاہر القادری سے ملاقات‘ انقلاب مارچ کی تاریخ کا اعلان آج ہو گا‘ بڑی خبر دینگے : شجاعت‘ پرویز الہی

لاہور (ایجنسیاں) ق لیگ کے صدر شجاعت حسین اور سینئر رہنما چودھری پرویز الٰہی نے کہا ہے کہ انقلاب مارچ کی تاریخ کا اعلان آج اتوار کو کیا جائے گا اور عوام کو بڑی خبر دیں گے۔ اس امرکا اظہار انہوں نے ڈاکٹر طاہر القادری سے انکی رہائشگاہ پر ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کیا۔ قبل ازیں عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد بھی ملاقات میں شریک ہوئے مگر جلد واپس چلے گئے۔ چودھری شجاعت حسین اور چودھری پرویز الٰہی سے بار بار ملاقات میں کئے گئے فیصلوں سے متعلق استفسار کیا گیا تو انہوں نے سوال کے جواب میں یہی کہا کہ کل اس بارے میں اتحاد میں شریک دیگر جماعتوں کے رہنماؤں کے ساتھ پریس کانفرنس کے دوران ہی فیصلوں کا اعلان کریں گے۔ چودھری پرویز الٰہی نے کہا کہ اتحاد میں شریک عوامی تحریک، مجلس وحدت المسلمین، عوامی مسلم لیگ، (ق) لیگ اور سنی اتحاد نے حکومت کے خلاف تحریک کے حوالے سے فیصلے کرلئے ہیں اور اس حوالے سے اتوار یعنی آج مشترکہ پریس کانفرنس کرینگے۔ اس سوال پر کہ اسلام آباد میں مسلح افواج کو 245 کے اختیارات دیدیئے گئے ہیں کیا وہ نظربندیوں اور گرفتاریوں کیلئے تیار ہیں۔ چودھری پرویز الٰہی نے کہا کہ اس حوالے سے کسی کو بھی کوئی خوف نہیں ہے تاہم سعودی حکومت کی جانب سے حکومت مخالف تحریک کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ سعودی عرب سمیت کسی بھی بیرونی قوت کا اس تحریک سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ نوازشریف اتنے دن سعودی عرب میں بیٹھے رہے لیکن سعودی حکومت نے انکے حق میں ایک بھی بیان نہیں دیا۔ غزہ پر اسرائیلی بمباری سے متعلق چودھری پرویز الٰہی نے کہاکہ انکی ہمدردیاں فلسطینی بہن بھائیوں کے ساتھ ہیں۔ مسلم اُمہ کو فلسطینی عوام پر مظالم رکوانے کیلئے جو کردار ادا کرنا چاہئے تھا وہ نظر نہیں آیا۔ تحریک انصاف کے ارکان اسمبلی سے استعفیٰ طلب کئے جانے سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی اپنی کور کمیٹی ہے اور وہ اپنے فیصلے خود کریگی ہم جس اتحاد میں شامل ہوئے ہیں انکے درمیان دس نکاتی معاہدہ ہوا ہے۔ اس سوال پر کہ عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد ناراض ہوکر واپس چلے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ شیخ رشید کو جلد واپس جانا تھا مشترکہ پریس کانفرنس میں سب موجود ہوں گے۔ آئی این پی کے مطابق ڈاکٹر طاہر القادری سے چودھری برادران اور شیخ رشید کی ملاقات میں ’’یوم انقلاب‘‘ کیلئے حتمی مشاورت مکمل کرلی گئی۔ ہفتہ کے روز ماڈل ٹائون میں 2گھنٹے سے زائد تک ملاقات کی جس میں ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال اور یوم انقلاب کے حوالے سے آئندہ کی حکمت عملی کو حتمی شکل دیدی گئی ہے۔ چودھری شجاعت نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ مجھے حکومت کا مستقبل خاصا تاریک نظر آ رہا ہے، حکومت نے مذاکرات کے دروازے بند کر دئیے اور انہیں حکومت کا مستقبل خاصا تاریک نظر آ رہا ہے۔ نجی ٹی وی کے مطابق ڈاکٹر طاہر القادری کا انقلاب مارچ 12 اگست کو ہوسکتا ہے۔ ذرائع کے مطابق ڈاکٹر طاہر القادری اور عمران خان 14 اگست کو اسلام آباد میں اکٹھے ہونگے۔ ڈاکٹر طاہر القادری 12 اگست کی شام بذریعہ جی ٹی روڈ اسلام آباد روانہ ہونگے۔علاوہ ازیں ایک انٹرویو میں صدر چودھری شجاعت  نے کہا ہے کہ  نوازشریف سے سیاسی اختلاف ہے دشمنی نہیں، عمران خان اور طاہرالقادری آخری لمحات میں آپس میں مل جائیں گے، طاہر القادری کا انقلاب خونی نہیں پرامن ہوگا، عمران خان کے آزادی مارچ نام رکھنے کی بات سمجھ نہیں آئی کہ  وہ  کس  سے  آزادی  چاہتے ہیں۔