سعودی اتحادی کارروائیوں میں اب تک 136 باغی مارے جا چکے

سعودی اتحادی کارروائیوں میں اب تک 136 باغی مارے جا چکے

یمن میں سعودی اتحادی فورسز کا آپریشن جاری ہے، ایک ہفتے سے جاری لڑائی میں عدن، الضالع اور لحیج میں اب تک 136باغی مارے جا چکے ہیں۔ سعودی وزارت داخلہ کے سیکیورٹی ترجمان جنرل منصور الترکی کے مطابق عسیر کے علاقے میں اگلے مورچے الحصن میں ڈیوٹی سرانجام دینے والے سعودی سرحدی محافظوں پر فائرنگ کی گئی، جس کا سعودی سرحدی محافظوں کی جانب سے بھرپور جواب دیا گیا، تاہم فائرنگ کے اس تبادلے میں ایک سعودی اہلکار جاں بحق اور دس زخمی ہوگئےسعودی فوجی ترجمان کا کہنا ہے کہ آپریشن کے دوران سعودی واتحادی افواج کی بمباری سے حدیدہ میں حوثیوں باغیوں کا سام 3میزائل ڈپوتباہ ہوچکا، جبکہ سعودی اور اتحادی فوج نے حوثی باغیوں کو ہتھیاروں اور بیرونی امداد سے محروم رکھنے کے لیے یمن کے گرد سمندری محاصرہ بھی جاری رکھا ہوا ہے۔دوسری جانب یمن میں حوثی باغیوں نے اپنے اتحادیوں کے ساتھ مل کر شمالی بندرگاہی شہر عدن کے ایک وسطی حصے کا کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔ خبر رساں ادارے کے مطابق حوثیوں کی طرف سے عدن کے اس حصے پر کنٹرول کے کئی گھنٹے بعد سمندری راستے سے نامعلوم مسلح افراد عدن کی بندرگاہ سے ملک میں داخل ہوئے ہیں۔ بندرگاہ کے حکام کے مطابق یہ مسلح گارڈ سویلین افراد کو نکالنے اور امدادی سامان پہنچانے کی کوشش کرنے والے ایک چینی جہاز سے اتر کر بندرگاہ میں داخل ہوئے تھے۔,
ادھرامریکا میں موجود سعودی سفیر کا کہنا ہے کہ عدن میں حوثی باغیوں کے خلاف حلیف قبائلی اور فوج سے رابطہ میں ہیں اور عدن میں زمینی فوج بھیجنے پر غور کرہے ہیں۔

یمن میں محصور  پاکستانیوں کو لے کر پی آئی اے کی فلائٹ اسلام آباد پہنچ گئی ،  دیار غیر سے آنے والی   پرواز  کے تمام مسافر خیریت سے ہیں ،   اس موقع پر ائیرپورٹ پر تمام مسافروں کے لواحقین کی بڑی تعداد ان کا استقبال کرنے کے لئے موجود تھی جنہوں نے پھولوں کے ہار پہنا کر اپنے عزیز و اقارب کو خوش آمدید کہا ، وطن واپس پہنچنے کے بعد تمام افراد شدت جذبات سے رو پڑے اور خدا کے حضور سجدہ شکر ادا کیا ،  اس موقع پر   یمن سے آنے والے شہریوں کا کہنا تھا کہ انہوں نے مشکل حالات دیکھے  وطن واپس پہنچنے پر  بے خوش ہیںشہریوں نے وطن واپسی پر  حکومت اور میڈیا کی  کاوشوں کو بھی  خراج تحسین پیش کیا ، یممن سے پاکستانیوں کی واپسی کیلئے پی آئی اے نے اپنا خصوصی طیارہ بھیجا تھا ۔