ایک سال میں بڑی تبدیلیاں لائیں گے‘ قوم سے وعدہ ہے امن و امان کی صورتحال بہتر بنائینگے:شہباز شریف

ایک سال میں بڑی تبدیلیاں لائیں گے‘ قوم سے وعدہ ہے امن و امان کی صورتحال بہتر بنائینگے:شہباز شریف

لاہور (خبر نگار) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے ملک کو درپیش سب سے بڑا چیلنج توانائی کی کمی ہے اور ہم اس مسئلے کو مستقبل بنیادوں پر حل کرنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کر رہے ہیں۔ پنجاب میں عوام کی فلاح و بہبود کے لئے انقلابی اقدامات کئے جارہے ہیں جس میں خدمت کارڈ کا اجراء اور نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے کے لئے پنجاب روزگار بنک کا قیام شامل ہے۔ موجودہ حکومت کے پانچ ماہ کے دور میں کرپشن کا ایک بھی سکینڈل سامنے نہیں آیا جو ایک بہت بڑی کریڈٹ کی بات ہے۔ انشاء اللہ آئندہ اڑھائی برس میں حکومتی اقدامات کی بنا پر عوام کو آسودگی حاصل ہوگی اور مہنگائی، ذخیرہ اندوزی اور ناجائزمنافع خوری کے مرتکب افراد سلاخوں کے پیچھے ہوں گے۔ ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا قدرت نے ہمیں بیش بہا وسائل سے نوازا ہے لیکن ہم آج بھی کشکول اٹھائے پھر رہے ہیں، ہمیں اپنے وسائل پر انحصار کرتے ہوئے اپنے پاؤں پر کھڑا ہونا ہوگا۔ ہمیں ہر شعبے میں اپنی قومی ذمہ داری کو پورا اور بدانتظامی کو ختم کرنا ہوگا۔ کس قدر افسوس کی بات ہے سابق حکمرانوں کے دور میں نندی پور کا پروجیکٹ اڑھائی سال تک زیر التوا رہا جو کہ ایک مجرمانہ غفلت تھی لیکن ہم نے آتے ہی اس پراجیکٹ کو شروع کیا اور آج 98فیصد مشینری نندی پور پہنچ چکی ہے اور منصوبے کی تکمیل کا کام تیز رفتاری سے جاری ہے اور آئندہ برس کے اوائل میں پہلی ٹربائن اپنا کام شروع کردے گی جس سے سو سے ڈیڑھ سو میگا واٹ بجلی نیشنل گرڈ میں آجائے گی۔ انہوں نے کہا کہ احتساب کے حوالے سے آج بھی اپنے وعدے پر قائم ہوں، قومی وسائل لوٹنے والوں کے خلاف بلاتفریق کارروائی ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہا پہلے بھی عوام کی خدمت کی اور اب بھی اس سے بڑھ کر عوامی فلاح و بہبود کے اقدامات کریں گے۔ میٹروکا منصوبہ مکمل کیا جس پر آج ایک لاکھ 40ہزار افراد سفر کر رہے ہیں۔ خدمت کارڈ سے 13لاکھ خاندان مستفید ہوں گے جبکہ پنجاب روزگار بنک کے ذریعے پڑھے لکھے نوجوانوں کو اپنا کاروبار شروع کرنے کے لئے بھی بلاسود قرضے دیئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا توانائی کے بحران سے نمٹنے کے لئے کئی ممالک سے معاہدے کئے گئے ہیں اور ان منصوبوں میں، ہائیڈل، سولر، کوئلے، بائیوماس، بائیوگیس کے منصوبے بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی ایک طرف ڈرون حملوں کے خلاف احتجاج کر رہی ہے اور دوسری جانب غیر ملکی امداد بھی حاصل کررہی ہے یہ کیسا تضاد ہے۔ ہم نے اڑھائی سال قبل مئی 2011ء میں امداد لینا بند کردی تھی جو بے گناہ پاکستانیوں کے خون میں لتھڑی ہو اور آج بھی اس فیصلے پر قائم ہیں۔ انہوں نے کہا امریکہ سے دوستی امداد کے بغیر بھی ہوسکتی ہے۔ ہم تنقید کوخندہ پیشانی سے برداشت کرتے ہیں اور اس سے رہنمائی بھی حاصل کرتے ہیں۔ قومی وسائل لوٹنے والے کسی رعایت کے مستحق نہیں اور ہم نے ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ بجلی اور گیس چوروں کے خلاف بلاامتیاز کارروائی کی۔ مہنگائی ضرور ہے لیکن انشاء اللہ ہمارے اقدامات کی بدولت آئندہ دو اڑھائی برس میں عوام کو ریلیف حاصل ہوگا۔ بجلی کے نرخ بڑھائے جانے کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ دو سو یونٹ تک 155ارب روپے کی سبسڈی دی جا رہی ہے۔ انشاء اللہ ہم ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کریں گے اور مستقبل کو تابناک بنائیں گے۔ انہوں نے کہا قوم سے وعدہ ہے امن و امان کی صورتحال کو بہتر بنائیں گے اور عوام ایک سال کے اندر تھانہ کلچر میں تبدیلی دیکھیں گے۔  شہباز شریف  نے کہا کہ  ایک سال میں صوبے میں  بڑی تبدیلیاں  لائینگے، تھانہ کلچر کو بدل دینگے، سولر انرجی کا پہلا کمرشل   منصوبہ  پنجاب میں  لگے گا۔ نوجوانوں کو روزگار  کے لئے چھوٹے قرضے دینگے۔ قرضوں پر سود  نہیں سروسز  چارجز  لئے جائینگے۔ ایک سوال  پر انہوں نے کہا ادویات کی قیمتوں پر وفاق سے بات کروں گا۔ شہباز شریف  نے کہا تحریک انصاف  کی صوبائی حکومت  ایک طرف امریکہ سے امداد لے رہی ہے،  دوسری طرف نیٹو سپلائی کو روک رہے ہیں۔ ایک طرف  امداد اور دوسری طرف احتجاج کھلا تضاد ہے۔