نادرا : شاہ رکن عالم آفس کے عملہ نے نابینا شخص کو تختہ مشق بنا لیا

نادرا : شاہ رکن عالم آفس کے عملہ نے نابینا شخص کو تختہ مشق بنا لیا

ملتان (جنرل رپورٹر) نیشنل ڈیٹابیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) شاہ رکن عالم آفس کے عملہ کی عدم توجہی اور روائتی حربوں نے لاڑ کے رہائشی ایک نابینا شخص کو تختہ مشق بنا کر رکھ دیا ہے۔ متاثرہ ثناءخواں حافظ محمد رمضان کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ کی تجدید کیلئے 4 اپریل سے 27 مئی تک فارم کی تصدیق کے مرحلہ سے ہی نہ نکل سکا اور اب تک لاڑ سے ملتان تک درجنوں چکر لگا چکا ہے۔ حافظ محمد رمضان نے نوائے وقت دفتر آ کر بتایا کہ 4 اپریل کی صبح اس نے شاہ رکن عالم دفتر میں رابطہ کر کے فارم وصول کیا اور 5 اپریل کو تصدیق کروانے کے بعد نادرا آفس میں فارم جمع کرا دیا اور اسی روز اسے فون پر اطلاع دی گئی کہ آپ کے فارم پر اعتراض لگ گیا ہے۔ آپ کو فارم میں خود کو نابینا نہیں لکھنا چاہئے تھا دوبارہ فارم جمع کرایا گیا تو اعتراض لگایا گیا کہ آپ کا نام فیملی میں شامل نہیں ہے اپنے بھائیوں اور والدین کے کارڈز ہمراہ لائیں۔ یہ اعتراض بھی دور کر دیا تو مجھے کہا گیا کہ 15 سے 20 دن صبر کریں اور از سر نو فارم بھریں دوبارہ فیس جمع کروائیں تاکہ آپ کو کارڈ جاری کیا جا سکے۔ متاثرہ حافظ رمضان نے صدر پاکستان‘ نگران وزیراعظم اور چیف جسٹس سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ایک پاکستانی ہونے کے ناطے اپنی شناخت چاہتا ہے اسے جائز حق کیلئے اس قدر خوار کیوں کیا جا رہا ہے۔