میاں چنوں: وکلاءکا نادرا آفس پر دھاوا‘ عملے سے بدتمیزی

میاں چنوں: وکلاءکا نادرا آفس پر دھاوا‘ عملے سے بدتمیزی

میاںچنوں(خبر نگار) سابق صدر بار ایسوسی ایشن میاں چنوں شاہد امیر کھٹڑکا ساتھی وکلاءکے ہمراءنادرا آفس میاں چنوں میں دھاوا۔نادرہ اسٹاف کو یرغمال بنا لیا۔لیڈی سٹاف کے ساتھ بد تمیزی ۔انچارج نادرہ آفس میاں چنوں اور دیگر سٹاف کو دھکے اور ر گالیاں ۔نادرہ انچارج اور سٹاف نے احتجاجا کام بند کرکے دفتر کو تالے لگا دیئے۔ تفصیل کے مطابق میاں چنوں نادرا آفس میں گزشتہ سے پیوستہ روز سابق صدر بار سردار شاہد امیر کھٹڑ ایڈووکیٹ کا20 سے زائد ساتھی وکلاءکے ہمراہ نادرا آفس میاں چنوں میں گھس کر غنڈہ گردی کرنے اورلیڈی ا سٹاف کو ننگی اور غلیظ گالیاں دینے اور انچارج نادرا دفتر کو دھمکیاں دینے کے خلاف نادرا آفس میاں چنوں کے ملازمین نے احتجاجا کام بند کر کے شٹرڈاﺅن کر دیئے،دفتر کے باہر نوٹس بورڈآویزاں کردیا ہے کہ وکلاءگردی بند ہونے تک احتجاجا کام نہیں کریں گے۔نادرا ذرائع کے مطابق شاہد امیر کھٹڑ ایڈووکیٹ نے نادرا آفس کی فی میل ملازمہ جوکہ شناختی کارڈ کے فارم وصول کرتی ہے کو غلیظ گالیاں دیں اور شدید بدتمیزی کی ۔انچارج دفتر نادرا اور ملازمین کے منع کرنے پر ان کو بھی دھمکیاں دیں ۔اور دفتر آنے سے روک دیااگر دفتر آیا تو تجھے سڑک پر لا کر پھینٹی لگائے گے ۔وکلاءگردی کی ویڈیو بنانے والے شہری کو مرغا بنا کر شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا ا ور اس کا موبائل چھین کر لے گئے ۔نادرا ملازمین کے مطابق اکثر وکلاءنے عدالتی کام کی بجائے نادرا دفتر میں کام شروع کر رکھا ہے اور اپنے عہدوں کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہوئے روزانہ ساٹھ سے ستر ٹوکن لگواتے ہیں جس کی وجہ دور دراز دیہات سے آنے والے سادہ لوح لوگ شہری خواتین اور ضعیف افراد کو شدید پریشانی کا سامناکرنا پڑتا ہے ۔نادرا ملازمین نے نا م نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ اگر وکلاءکے کام ترجیحی بنیادوں پرنہ کئے گئے اور وکلاءکو پروٹوکول نہ دیا گیا تو نادرا ملازمین اپنی پٹائی کروانے کے لئے تیار رہیں۔اس سلسلہ میں جب سردار شاہد امیر کھٹڑ سے رابطہ کیا گیا تو انہوںنے تمام الزامات کی تردید کی اور کہا کہ ہم تو ساتھی وکلاءشعبان جونا اور مظہر کچھی کے کاموں کے سلسلہ میں اکھٹے ہوکر گئے تھے ۔اور ایسا کوئی واقعہ رونما نہیں ہوا۔