’’بلاوجہ انجکشن لگوانے سے ہیپا ٹائٹس کا مرض پھیل رہا ہے‘‘

’’بلاوجہ انجکشن لگوانے سے ہیپا ٹائٹس کا مرض پھیل رہا ہے‘‘

لاہور (نیوز رپورٹر) پاکستان علاج کی غرض سے سرنجیں اور ٹیکے استعمال کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک بن گیا اور انہی ٹیکوں کی وجہ سے ہیپا ٹائٹس کا مرض تیزی سے پھیل رہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز میں سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم پروگرام برائے ہیپاٹائٹس کنٹرول کے سابق پروگرام منیجر پروفیسر آفتاب محسن، یو ایچ ایس کے ڈائریکٹر اور ماہر امراض جگر عارف رشید خواجہ، علامہ اقبال میڈیکل کالج کے پروفیسر عارف صدیقی، قائم مقام وائس چانسلر یو ایچ ایس پروفیسر محمد طاہر،اسسٹنٹ پروفیسر امیانولوجی ڈاکٹر شاہ جہاں نے کیا۔ دریں اثناء شالا مار ٹیچنگ ہسپتال میں گزشتہ روز فری ہیپاٹائٹس  کیمپ کا انعقاد کیا گیا ۔ پروفیسر ظفر اللہ خان نے افتتاح کیا ۔  کیمپ میں مریضوں کو ہیپا ٹائٹس بی اور سی کی سکریننگ کی سہولت فراہم کی گئی ۔جبکہ ڈاکٹر ہارون یوسف ، ڈاکٹر رضوان ظفر اور ڈاکٹر مہیش کمار نے  کیمپ کے شرکاء کو امراض جگر و معدہ اور ہیپا ٹائٹس سے متعلق خصوصی لیکچر دیا ۔ ہیپا ٹائٹس سے آگاہی کے لیے چیف آپریٹنگ آفیسر شالامار ٹیچنگ ہسپتال پروفیسر احمد وسیم یوسف اور پروفیسر ظفراللہ کی قیادت میں خصوصی واک بھی ہوئی۔ دریں اثنا ممتاز معالج  پروفیسر حکیم اعجاز فاروقی نے خصوصی نشست سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہیپاٹائٹس  کی تمام  اقسام قابل علاج ہیں۔ پروفیسر اعجاز فاروقی نے کہا کہ حدیث پاک کے مطابق ہر مرض کی دوا موجود ہے۔ انہوں نے کہا رائے زنی کی بجائے تحقیق پر توجہ دی جائے۔