گوجرانوالہ: 24 فلور ملوں میں ناقص اور خراب گندم کے آٹے کی خرید و فروخت کا انکشاف

گوجرانوالہ(نمائندہ خصوصی) ڈسٹرکٹ گوجرانوالہ مےں 24سے زائد فلور ملوں مےںانتہائی گھٹےا ناقص اور بارشوں سے خراب ہونے والی گندم کے آٹے کی خرےدو فروخت کا انکشاف ہوا ہے جس مےں مبےنہ طور پر محکمہ خوراک کے کئی افسران اور فوڈ انسپکڑز بھی ملوث بتائے جاتے ہےں۔ ذرائع کے مطابق ڈسٹرکٹ کے اکثر علاقوں مےں واقعہ 24سے زائد مل مالکان کھل عام زمےنداروں، کسانوں مختلف علاقہ منڈےوں سے اندر کھاتے اور انتہائی گھٹےا کوالٹی اور مضر صحت گندم سستے ترےن داموں خرےد کر اسے بغےر دھوئے اور مٹی نکالے آٹا پےس کر بازاروں مارکےٹوں مےں فروخت کر رہے ہےں اور اکثر ملوں کے آٹے کے تھےلوں سے انتہائی زہرےلی اور خطرناک قسم کی بدبو پائے جانے اور سنڈےاں رےنگنے کی شکاےات عام ہو گئی ہیں جبکہ ان گھٹےا کوالٹی کے آٹے سے سوجی، میدہ بھی نکال لےا جاتا ہے اور ”چھان“ کی اکثرےت سے لبرےز ناقص آٹا مہنگے داموں مارکےٹوں، ہوٹلوں اور دےگر کاروباری مراکز مےں فروخت کےا جا رہا ہے جس کے استعمال سے شہرےوں کی بڑی تعداد ہےپاٹائٹس، معدہ، جگر، گردے، انتڑےوں کی سوزش، مثانے سمےت کئی دےگر مہلک امراض کا شکار ہو رہے ہےں جبکہ محکمہ خوراک کی جانب سے بھی ضلع بھر کی 69فلور ملوں کو 609باڈےز کی روزانہ گندم سپلائےوں مےں سرکاری سطح پر مل مالکان کے گٹھ جوڑ سے بڑی وسےع پےمانے پر گھپلوں کے انکشافات ہوئے ہےں۔ ذرائع کے مطابق محکمہ خوراک کے افسران ”اوپرکی سطح “سے دباﺅ آنے پر بعض اوقات کچھ فلور ملوں کے سےمپل بھر کر لاہور لےبارٹری مےں تجزےے کےلئے بھجوا دےتے ہےں مگر وہاں سے اےسے بہت سے سےمپل کی رپورٹس کو ”اوکے“ کرا کر بھجوا دےا جاتا ہے۔ ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر آفس کے مطابق انہوں نے چند ےوم قبل ہی بعض فلور ملوں کے سےمپل لاہور بھجوائے ہےں اور اگر انکا رزلٹ غلط نکلا تو ان ملوں کو سےل کردےا جائے گا۔