کامیابی کاراز

 ریحانہ سعیدہ لاہور
علی بیٹا نمازِ عشاءادا کرو اور سو جاﺅ صبح فجر کی نماز پڑھ کے دہرائی کر لینا اچھا ماما کیا مصیبت ہے یار علی سارا سال پڑھو اکیڈمی جاﺅ۔ کسی رشتے دار کے گھر بھی نہیں جانا کہ بورڈ کے پیپرز ہیں پڑھائی ضروری ہے اب پڑھ پڑھ کے دماغ تھک گیا ہے اس لئے اب ٹی وی دیکھ کے سو جاوںگا۔ کافی اچھی تیاری بھی ہو گئی ہے میری ، بیٹا جلدی سو جانا ما ما نے پھر آواز دی اوکے ماماجان۔ اُف بارہ بج گئے اب تو نماز کا وقت بھی نہیں رہا اب سو جاتا ہوں کل قضا کر لوں گا رات کو خواب میں بھی علی کو ہیرو اور ولن کی لڑائی ہی نظر آتی رہی صبح جب اماں جگانے آئیں تو علی سے اٹھا نہ گیا نما ز بھی نہ پڑھی ، پیپر کی دہرائی کیا ہوتی بھاگم بھاگ پیپر دینے سنٹر میں پہنچا اور جب پیپر سامنے آیا تو رات کو جاگنے اور دماغی تھکن سے پیپر اُتنا اچھا نہ ہوا جس کی اسے امید تھی علی پریشان گھر لوٹا امی کے پوچھنے پر بتایا کہ پیپر اچھا نہیں ہوا ماما کہنے لگی بیٹا ہر مسلما ن کی کامیابی کا دارومدار اللہ کا ذکر ہے اور میں تمہیں دیکھتی رہی تھی جب تم سوئے میں نے ٹوکا اس لئے نہیں تھا کہ تم اللہ کا ذکر جبر سے نہیں بلکہ شوق سے کرو اور یہ تبھی ممکن تھا جب تمہیں خود احساس ہوتا اگر رات تم اللہ کا ذکر کر کے جلدی سوتے تو فلم کی بجائے اللہ کی مدد شامل ہوتی کیونکہ جب کوئی اللہ کو پکارتا ہے تو اللہ اس کی طرف آتا ہے پھر تم فجر کی نماز بھی خوشدلی سے ادا کرتے اور پیپر کی دہرائی بھی کر لیتے۔ سوری اللہ جی اور سوری ماما میں نے اللہ سے بھی بےوفائی کی اور آپ کا کہنا بھی نہیں مانا جس کی وجہ سے مجھے نقصان اٹھانا پڑا مجھے احساس ہو گیا ہے اب میں ظہر کی نماز پڑھنے جا رہا ہوں انشاءاللہ آ کے پیپر کی تیاری کروں گا شاباش بیٹا تم نے اپنی غلطی سے سبق سیکھ لیا۔