سانحہ لاہور، آزاد کشمیر اسمبلی میں ایم کیو ایم کی قرارداد مذمت، مسلم لیگ ن کا احتجاج

مظفرآباد (آن لائن) سانحہ لاہور پر آزاد کشمیر اسمبلی میں  ایم کیو ایم کی قرارداد مذمت پرمسلم لیگ ن  کا شدید احتجاج، ہنگامہ آرا ئی، ایوان مچھلی منڈی بن گیا،  تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز جب اسمبلی کا اجلاس شروع ہوا تو ایم کیو ایم آزادکشمیر کے پارلیمانی لیڈر، وزیر ٹرانسپورٹ و کوآپریٹو محمد طاہر کھوکھر نے فاتحہ  خوانی  کے بعد ایوان کی توجہ لاہور میں ہونے والے سانحہ کی جانب مبذول کرواتے ہوئے معصوم انسانی جانوں کے ضیاع پر افسوس اور واقعہ کی مذمت کے حوالے سے قرارداد پیش کرنا چاہی تو قائد حزب اختلاف راجہ محمد فاروق حیدر اورمسلم لیگ ن    کے دیگر ارکان نے شدید ہنگامہ آرائی شروع کردی۔ فاروق حیدر نے کہا کہ حکومت وضاحت کرے کہ قرارداد اس کی جانب سے ہے یا وزیر ٹرانسپورٹ کی جانب سے، اگر قرارداد وزیر ٹرانسپورٹ کی جانب سے ہے تو موصوف وزارت سے استعفیٰ دے کر قرارداد پیش کریں جس پر وزیر خزانہ چودھری لطیف اکبر، وزیر تعلیم میاں عبدالوحید اور پیپلز پارٹی کے دیگر ارکان نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ قرارداد کسی کے خلاف نہیں نہ ہی اس میں کوئی قابل اعتراض مواد ہے بلکہ قرارداد ایک ایسے واقعہ کے خلاف ہے جس کی پوری قوم مذمت کر چکی ہے۔ معصوم انسانی جانوں کی شہادت کے واقعہ پر ایوان میں افسوس کی قرارداد کی مخالفت سمجھ سے بالاتر ہے۔ مسلم لیگ ن  مخالفت برائے مخالفت کی پالیسی ترک کرے اور آزادکشمیر اسمبلی کی درخشاں روایات کی پاسداری کرے۔ اس پر مسلم کانفرنس کے ملک نواز نے کھڑے ہو کر قرارداد کا متن پڑھ کر سنایا اور کہا کہ قرارداد میں ایک لفظ بھی قابل اعتراص نہیں ۔ صرف متاثرہ خاندانوں سے افسوس اور واقعہ کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے۔  بعدازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایم کیو ایم آزادکشمیر کے پارلیمانی لیڈر، وزیر ٹرانسپورٹ و کوآپریٹو محمد طاہر کھوکھر نے کہا کہ لاہور میں جس طرح پولیس نے نہتے عوام پر فائرنگ کی اور دو خواتین سمیت 9 افراد شہید ہوئے یہ قابل مذمت ہے۔
آزاد کشمیر اسمبلی