ثنا ءاللہ زہری کا بیٹا‘ بھائی ‘ بھتیجا سپردخاک‘ بلوچستان میں ہڑتال

کوئٹہ (ثنا نیوز+ نوائے وقت نیوز) بلوچستان کے ضلع خضدار میں گزشتہ روز ہونے والے بم دھماکے میں ہلاک ہونے والے مسلم لیگ(ن) بلوچستان کے صوبائی صدر نواب ثنا اللہ زہری کے بھائی بیٹے اور بھتیجے سمیت چاروں افراد کو ان کے آبائی علاقے میں سپردخاک کردیا گیا۔ انتخابی مہم کے سلسلے میں انجیرہ سے زہری جاتے ہوئے ثنا اللہ زہری کے قافلے کو ریموٹ کنٹرول بم سے نشانہ بنایاگیا تھا۔ہلاک ہونے والے افراد کی تدفین میں سرکاری حکام اور قبائیلی عمائدین کے علاوہ بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ دریں اثنا مسلم لیگ ن کی کال پر بدھ کو مستونگ منگیچر، قلات، خضدار اوربعض دیگر علاقوں میں شٹر ڈان ہڑتال کی گئی۔ حب ، سوراب اور منگوچر میں بھی احتجاجا کاروبار بند رہے۔ واقعے کے خلاف مسلم لیگ بلوچستان نے تین روزہ سوگ کا اعلان بھی کیا ہے۔ علاوہ ازیں بلوچستان کی حکومت نے اہم سیاسی رہنماو¿ں کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر جیمرز خریدنے کی منظوری دی ہے۔ جیمرز خریدنے کا فیصلہ نگران وزیراعلیٰ بلوچستان نواب غوث بخش خان باروزئی کی زیرصدارت اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس کو بتایاگیا کہ 200 انتخابی امیدواروں کو سکیورٹی فراہم کر دی گئی ہے۔ اجلاس کو یہ بھی بتایا گیا نواب ثناءاللہ زہری کو بھی ان کے مشورے اور ضرورت کے مطابق سکیورٹی اہلکار فراہم کئے گئے ہیں تاہم ان کے قافلے پر ابتدائی معلومات اور تحقیقات کے مطابق آئی ای ڈی کے ذریعے حملہ کیاگیا۔