اوکاڑہ: غلط انجکشن سے 12 سالہ بچہ جاں بحق‘ ورثا نے کلینک کا گھیرائو کرلیا‘ دھرنا

اوکاڑہ(نا مہ نگار) ڈاکٹر کی مبینہ غفلت غلط انجکشن لگنے سے بارہ سالہ بچہ دم توڑ گیا بچے کے ورثاء نے ڈاکٹر کے کلینک کا گھیرائو کلینک کے سامنے دریاں بچھا کر دھرنا دیا، ڈاکٹر اور اس کے عملہ کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا، تفتیش میرٹ پر کی جائے گی،گنہگار سزا سے نہیں بچ سکیں گے، ڈی پی او اوکاڑہ کا موقف۔ تفصیلات کے مطابق میاں کالو نی اوکاڑہ کے رہائشی خالد محمود مغل کا 13سالہ بیٹا سکندر خالد جو چوتھی کلاس کا طالب علم تھا معمولی بیمار ہوا تو اس کو ڈاکٹر حافظ لیاقت علی کے کلینک لایا گیا جہاں پر ڈاکٹر حافظ لیاقت علی نے سکندر خالد کو غلط انجکشن لگا دیا جس سے سکندر خالد جاںبحق ہو گیا ، طالب علم کے ورثاء نے سابق سٹی ناظم حاجی عبدالستار مغل ، مرزا ذولفقار علی ایڈووکیٹ ، محمد اسلم مغل ایڈووکیٹ ، حاجی غلام مصطفی مغل ودیگر کی قیادت میں کلینک کے سامنے احتجاجی دھرنا دیا جس پر مقامی ایم این اے محمد عارف چوہدری، صدر مرکزی انجمن تاجران چوہدری سلیم صادق ودیگر راہنما بھی موقع پر آگئے۔ تھانہ اے ڈویژن پولیس نے ڈی پی او اوکاڑہ محمد فیصل رانا کے حکم پر ڈاکٹر حافظ لیاقت علی اور اس کے عملہ کے خلاف مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی ہے مظاہر ین نے مقدمہ درج ہونے پر دھرنا ختم کر دیا، دوسری طر ف پی ایم اے کے صدر ڈاکٹر شاہد ڈوگر کا کہنا تھا کہ کوئی ڈاکٹر بھی دانستہ طور پر کسی کی موت کا ذمہ دار نہیں ہوتا اگر بلاجواز ڈاکٹر حافظ لیاقت کے خلاف کاروائی کی گئی تو سخت مزاحمت کریں گے ۔ ڈسٹر کٹ پولیس آفیسر اوکاڑہ محمد فیصل رانا نے کہا ہے تفتیش میر ٹ کی بنیاد پر کی جائے گی کو ئی گنہگار نہیں بچ سکے گا ۔