وہاڑی: حاملہ خاتون مسلسل تین گھنٹے تڑپتی رہی، طبی امداد نہ ملی، مردہ بچے کو جنم دیا

وہاڑی (نامہ نگار) ڈلیوری کیس کیلئے آنے والی حاملہ خاتون گائنی وارڈ کے لیبر روم میں تڑپتی رہی، لیڈی ڈاکٹر غائب، مسلسل تین گھنٹے تڑپنے کے بعد ماں کے پیٹ میں بچہ مرگیا، شکایت پر ایم ایس اور ہیڈ نرس ورثاء پر برس پڑے او ر ہسپتال سے نکال دیا خاتون نے پرائیویٹ ہسپتال میں مردہ بچے کو جنم دیا۔ ورثاء کا احتجاج، ڈی سی او وہاڑی کو درخواست، ڈی سی او نے انکوائری کا حکم دے دیا واقعات کے مطابق 32کوارٹر لڈن روڈ محلہ صدیق آباد کے رہا ئشی مشتاق احمد نے ڈی سی او وہاڑی کو دی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا کہ گزشتہ شب اپنی بیوی کو بسلسلہ ڈلیوری کیس کے لئے ڈی ایچ کیو ہسپتال کے گائنی وارڈ میں لایا تو وارڈ میں موجود سٹاف نرس نے لیبر روم بجھوا دیا۔وارڈ میں ہیڈ نرس نے جو نیئر نرس سے انجکشن اور بوتل لگو ا دی خو د مریضہ کو ہا تھ تک نہ لگایا۔ ایم ایس چوہدری محمد اشرف سے رابطہ کیا تو ڈیڑھ گھنٹے بعد آیا اور ہیڈ نرس فریحہ کو ساتھ لے کر لیبر روم میں چلا گیا۔ تین گھنٹے تک مسلسل درد سے چلانے کے بعد ماں کے پیٹ میں بچہ مرگیا۔ ورثاء نے احتجاج کیا تو ہمارا مریض ہسپتال سے نکال دیا جس پر اسے پرائیویٹ ہسپتال لے جایا گیا جہاں پر بڑے آپریشن کے بعد مردہ بچے کو نکا لا گیا جس پر ڈی سی او وہاڑی نے انکوائری کا حکم دے دیا۔