ملتان: والدین کی اکلوتی اولاد 3 سالہ بچی زیادتی کے بعد قتل، ملزم گرفتار

ملتان: والدین کی اکلوتی اولاد 3 سالہ بچی زیادتی کے بعد قتل، ملزم گرفتار

ملتان+ قلعہ دیدار سنگھ+ لاہور (خبر نگار خصوصی+ نامہ نگار+ خصوصی رپورٹر) تھانہ مظفر آباد کے علاقے گارڈن ٹاؤن میں 3 سالہ بچی کو زیادتی کر کے قتل کر دیا گیا۔ بچی بختاور گلی میں کھیل رہی تھی ملزم سمیع اللہ نے اسے اپنے مکان میں لے جا کر زیادتی کر کے قتل کر دیا۔ اہل علاقہ نے ملزم کو پکڑ کر تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد پولیس کے حوالے کر دیا۔ پولیس نے پوسٹ مارٹم کے لئے بچی کی لاش نشتر منتقل کر دی اور ملزم کے خلاف مقدمہ درج کر لیا۔ ملزم نے جس مکان میں بچی کو زیادتی کا نشانہ بنایا وہاں وہ اکیلا رہتا تھا اور سکیورٹی گارڈ کی ملازمت کرتا ہے۔ پولیس کے مطابق یہ تین سالہ بچی دن 12 بجے کے قریب کھیلتی ہوئی گھر سے نکلی اور پھر واپس نہیں آئی گھر والوں نے تلاش کرنا شروع کیا تو برابر والے خالی مکان کے غسل خانے سے اس کی لاش ملی۔ اے ایس آئی تھانہ مظفر آباد محمد زکریا کے مطابق دوران تفتیش ملازم سمیع اللہ نے اعتراف کیا ہے اس نے بچی سے زیادتی کی اور اس کے دوران وہ ہلاک ہوگئی۔یہ ساتھ والی کوٹھی میں ملازم تھا جو بچی کو ورغلا کر خالی مکان میں لے گیا۔ لڑکی اپنے والدین کی اکلوتی اولاد تھی اس کا خاندان ویسے تو ڈیرہ غازی خان کا مستقل رہائشی ہے تاہم کئی ماہ سے ملتان کے علاقے ڈیفنس ویو میں کرائے کے مکان میں رہائش پذیر تھا جبکہ بچی کے والد بیرون ملک ہیں۔ علاوہ ازیں قلعہ دیدار سنگھ میں اوباش نے 12سالہ محنت کش لڑکے کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا، ملزم گرفتار کر لیا گیا۔ قلعہ دیدار سنگھ میں قصاب کی دکان پر 12سالہ شیروز ملازم تھا گزشتہ روز محلہ کا اوباش اسد اللہ اسے اپنے ہوٹل میں لے گیا اور زبردستی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا جس کے بعد خون میں لت پت لڑکا قلعہ دیدار سنگھ تھانہ جا پہنچا اور اپنے ساتھ ہونے والی زیادتی کا احوال بتایا اس موقع پر بہت سے لوگ بھی تھانہ کے باہر جمع ہوگئے۔ پولیس نے ملزم اسد اللہ کو گرفتار کرکے تھانہ بند کر دیا پولیس مصروف تفتیش ہے۔ علاوہ ازیں وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے ملتان کے علاقہ گلشن مہر کالونی میں گھریلو ملازمہ سے مبینہ زیادتی اور تشدد کی خبر کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او ملتان سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔