سیاست میں آنا خواب ہے، سوات واپس جانے کو ترجیح دونگی: ملالہ یوسفزئی

سیاست میں آنا خواب ہے، سوات واپس جانے کو ترجیح دونگی: ملالہ یوسفزئی

لندن (نوائے وقت رپورٹ + آئی این پی) ملالہ یوسفزئی نے نوعمر طالبات پر زور دیا ہے وہ دیگر باتوں کی بجائے سوشل میڈیا کا استعمال خواتین کے مسائل کو اجاگر کرنے کیلئے کریں۔ وہ گزشتہ روز یہاں خواتین کے عالمی دن کے موقع پر ویمن آف دی ورلڈ فیسٹیول سے خطاب کر رہی تھیں۔ انہوں نے کہا  میں فیس بک ٹوئٹر یا انسٹاگرام استعمال نہیں کرتی کیونکہ اس کیلئے وقت درکار ہوتا ہے لیکن ہر ٹین ایجر کیلئے میرا یہ پیغام ہے کہ وہ ان سوشل میڈیا کو عورتوں اور بچوں کے مسائل کو سامنے لانے کیلئے استعمال کریں۔ انہوں نے اس بات پر حیرت کا اظہار کیا برطانیہ میں خواتین کو حقوق حاصل ہیں لیکن یہاں صرف 22 فیصد یا اس سے بھی کم خواتین پارلیمنٹ میں ہیں اور بڑی کمپنیوں کی سربراہ ہیں جبکہ دیگر ممالک میں صورتحال اس سے بہتر ہے۔ انہوں نے کہا سیاست میں آنا میرا خواب ہے، میں پاکستان واپس جا کر سوات میں کام کرنے کو ترجیح دونگی۔ لندن میں نوجوانوں کی فلاحی تنظیم کے زیراہتمام تقریب میں برطانوی شہزادے ہیری اور ملالہ یوسف زئی نے شرکت کی۔ ملالہ فنڈ اور فری دی چلڈرن نے لڑکیوں کے مسائل پر مل کر کام کرنے کا اعلان کیا۔ فری دی چلڈرن نامی فلاحی تنظیم کے تحت 'We Day UK' کی افتتاحی تقریب لندن میں ہوئی۔ تقریب میں شہزادہ ہیری، سابق امریکی نائب صدر الگور اور دیگر شخصیات کے ساتھ ملالہ یوسف زئی نے شرکت کی۔ برطانیہ بھر سے 12 ہزار نوجوان اس یونٹ میں شریک تھے۔ ایونٹ کا مقصد نوجوانوں کو معاشرے کا تعمیری اور سرگرم رکن بنانے کا شعور اجاگر کرنا تھا۔ علاوہ  ازیں ملالہ یوسفزئی نے خاموش بچوں کیلئے احتجاج کا اعلان کر دیا۔ ملالہ نے کہا ہے خاموش مظاہرہ 17 اپریل کو کیا جائے گا۔ مقصد خاموش کئے گئے بچوں سے اظہار یکجہتی ہے۔ ملالہ نے خاموش مظاہرے کیلئے مہم شروع کر دی۔ ملالہ یوسفزئی 24 گھنٹے تک نہیں بولیں گی۔ان کی سہلیاں بھی احتجاج کریں گی۔