===غزل===

ہے گماں کہ پیش نظر کہیں کوئی شے ہے حسن خیال سی
کوئی فکر خاص ہے جلوہ گر ترے حسن رُخ کی مثال سی
کوئی رنگ حسن طلب کا ہے کہ ہے سحر اس کے سکوت کا
ہے مرے لبوں پہ رُکی ہوئی کوئی بات لطفِ سوال سی
نہ بیاں کروں تو لگے کہ ساری فضا میں گونج اُسی کی ہے
جو بیاں کروں تو حکایتِ غم دل ہے قولِ محال سی
ہوئے اضطراب و سکون بہم، کریں کیا تعینِ کیف و کم
مہ و سال ہیں کبھی لمحہ ساں، کبھی ساعتیں مہ و سال سی
یہ شکست ِ شوق کا ہے اثر، یہ ہے اب مآلِ دل و نظر
کبھی شمع ذکر دھواں دھواں، کبھی یاد خواب و خیال سی
نہ ہوئی مسافت درد طے، وہی کیفیت کہ جو تھی سو ہے
وہی چشم تر میں غبار سا، وہی رُخ پہ گردِ ملال سی
کبھی رنجِ راحتِ رائیگاں، کبھی لطفِ عشرتِ جاوداں
کبھی صبح شامِ فراق سی، کبھی شام صبحِ وصال سی
جو تمام عمر نہ کٹ سکی، اسی شامِ غم کی ہے یہ عطا
وہی رُخ صحیفہ ءدرد سا، وہی آنکھ حرفِ سوال سی
یہ عجب زوالِ جنوں ہوا، نہ ادھر کسک نہ ادھر فسوں
نہ وہ ہجر وہمِ وصال سا، نہ وہ یاد قربِ جمال سی
وہی بحر و بر میں فساد ہے، وہی اوجِ موجِ عناد ہے
وہی خفتہ بختوں کے رنگ سے، وہی باتیں دورِ زوال سی
کبھی احسن آگے نظر کریں تو اک ایک پَل میں ہے امتحاں
کبھی مُڑ کے دیکھیں تو زندگی لگے ساری خواب و خیال سی
(حفیظ الرحمن احسن ۔ لاہور)