ظالمانہ لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے،چیف جسٹس سوموٹو ایکشن لیں:اعجاز الحق

ہارون آباد (نامہ نگار) مسلم لیگ (ضیائ) کے سربراہ و رکن قومی اسمبلی حلقہ این اے 191 محمد اعجاز الحق نے وائٹل ہاﺅس ہارون آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے کہ میرے حلقہ این اے 191ہارون آباد ،فورٹ عباس میں ظالمانہ اور غیر منصفانہ لوڈشیڈنگ کر کے اس پسماندہ علاقہ کے غریب عوام کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جارہا ہے چیف جسٹس آف پاکستان افتخار محمد چوہدری اس کا سو موٹو ایکشن لے کر اس غریب علاقے کے عوام کو اس ظلم سے نجات دلائیں ۔اس ظالمانہ لوڈشیڈنگ کے خلاف حلقہ کے عوام میں سخت اشتعال اور اضطراب پایا ہے اور لوگ تنگ آکر اگر اس ظلم کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے تو اس کی ذمہ داری حکومت پر ہو گی اگر اس حلقہ کے عوام نے احتجاج کیا تو میںبھی ان کے شانہ بشانہ اس ظلم کے خلاف سڑکوں پر ان کے ساتھ جاﺅں گا ۔انہوں نے کہا کہ اگر سوموار تک صورتحال کو درست نہ کیاگیا تو مسلم لیگ (ضیائ) حلقہ ہارون آباد ،فورٹ عباس سمیت ملک گیر احتجاج کرے گی اور قومی اسمبلی کے ایوان میں بھی لوڈشیدنگ کی اس ناانصافی کے خلاف آواز بلند کروں گا انہوں نے کہا کہ وزیراعظم میاں محمد نواز شریف بھی اس ظلم کے خلاف ہارون آباد ،فورٹ عباس کے عوام کی فریاد سنیں کیونکہ ان لوگوں نے پی پی پی کو نہیںبلکہ مسلم لیگ کو کامیاب کرایا ہے کیونکہ ہم بھی نظریاتی مسلم لیگی ہیں۔ مسلم لیگی حکومت میں میں مسلم لیگی ووٹرز کے ساتھ ناانصافی سے بڑھ کر ظلم اور جا سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ پی پی پی نے پانچ سال تک قوم کے ساتھ مذاق کیااور اداروں کو تباہ کر دیا۔الطاف حسین اگر برطانیہ میں کوئی قانونی کاروائی عمل میں لائی جاتی ہے تو ایم کیو ایم اس پر کراچی میں رد عمل کی بجائے اس کا قانونی طور پر سامنا کرے۔ انہوں نے کہا کہ ہارون آباد میں سوئی گیس میرٹ پر ہر گھر کو فراہم کی جائے گی جبکہ اس پانچ سالہ دور میں فقیر والی ،کچھی والہ مروٹاور فورٹ عباس تک سوئی گیس پہنچا دی جائے گی۔ بجٹ میں آئی ایم ایف کے ایجنڈے کو ترجیح دی گئی ہے اور آئی ایم ایف کی کڑی شرائط تسلیم کرنے سے عوام پر بوجھ پڑے گا۔بجٹ میں بہت سی خامیاں ہیں روپے کی قدر میں کمی تشویشناک ہے ۔انٹر نیشنل اسلامک ریلیف آرگنائزیشن سے حلقہ میں 300گھر غریب خاندانوں کے لئے تیار ی کے لےے بات چیت چل رہی ہے۔ ہاکڑہ نہر میں فراہم کیا جانے والاپانی مضر صحت ثابت ہوا ہے اس سلسلہ میں حکومت عوام کی ریلیف کے لےے مناسب حکمت عملی اختیار کرے ۔