وزیراعلیٰ کی ترجیحات کو عملی شکل دینے کیلئے جتنی فنڈنگ پاکستان لا سکا لاﺅنگا: محمد سرور

وزیراعلیٰ کی ترجیحات کو عملی شکل دینے کیلئے جتنی فنڈنگ پاکستان لا سکا لاﺅنگا: محمد سرور

لاہور (آئی این پی) پنجاب کے نامزد گورنر چودھری محمد سرور نے کہا ہے کہ میں پاکستان کے عوام کے لئے اجنبی نہیں ہوں‘ میں نے گزشتہ 35 سال کے دوران اپنے ملک کے ساتھ اپنا رابطہ کبھی ٹوٹنے نہیں دیا‘ پاکستان میں اعلی ترین مناصب کے لئے مجھے ماضی میں بھی پیشکش ہوتی رہی ہے اور آج بھی میں نے میاں نواز شریف سے کوئی عہدہ طلب نہیں کیا بلکہ برطانیہ کی شہریت چھوڑ کر پاکستان آنے کے پیچھے میری یہ خواہش ہے کہ پاکستان کے ان 70 لاکھ بچوں کو تعلیم کی سہولت دلواﺅں گا جنہوں نے سکول کا منہ تک نہیں دیکھا۔ گزشتہ روز مقامی ہوٹل میں معروف کالم نگار الطاف حسن قریشی کی جانب سے دئیے گئے استقبالیہ سے خطاب میں چودھری محمدسرور نے کہا کہ دنیا بھر کے مسلمان جانتے ہیں کہ چودھری سرور پاکستان اور پاکستان کے لوگوں سے محبت کرتا ہے۔ پاکستان میں جب بھی جمہوریت پر شب خون مارا گیا، میں نے جمہوریت کی بحالی کے لئے کی گئی ہر کوشش کا ساتھ دیا۔ سابق صدر پرویز مشرف نے جب عوام کے منتخب وزیراعظم محمد نواز شریف کا تختہ الٹ کر انہیں جیل میں ڈالا تو میں پہلا شخص تھا جس نے پاکستان آ کر جنرل مشرف سے کہا کہ مجھے نواز شریف سے ملاقات کا موقع دیں تاکہ میں دیکھ سکوں کہ کہیں ان کے ساتھ کوئی زیادتی تو نہیں ہو رہی۔ چوہدری محمد سرور نے کہا کہ میں پہلا شخص ہوں جو جیل میں نواز شریف سے جا کر ملا تھا۔ خوش قسمتی سے پنجاب کے وزیراعلی محمد شہباز شریف کی ترجیحات میں تعلیم کا فروغ سب سے نمایاں حیثیت رکھتا ہے۔ میں وزیراعلی پنجاب کی ترجیحات کو عملی شکل دینے جس قدر بین الاقوامی فنڈنگ پاکستان لا سکا، ضرور لے کر آﺅں گا۔ وزیر تعلیم پنجاب رانا مشہود احمد خاںنے اس موقع پر کہا کہ حکومت پنجاب 14 اگست سے انرولمنٹ ایمرجینسی نافذ کرکے 5 سے 9 سال کی عمر کے تمام بچوں کو سکولوں میں داخلہ دلوانے کی خصوصی مہم کا آغاز کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مہم کی کامیابی میں گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور کلیدی کردار ادا کریں گے۔ اس موقع پر معروف کالم نگاروں عطاءالحق قاسمی، الطاف حسن قریشی، رکن پنجاب اسمبلی ڈاکٹر فرزانہ نذیر اور سینیٹر ایس ایم ظفر نے بھی چوہدری محمد سرور کی قومی خدمات کے ٹریک ریکارڈ کے بارے میں اپنے تاثرات کا اظہار کیا۔