خون خرابہ نہیں امن و ترقی چاہتے ہیں۔۔آل پارٹیز کانفرنس بلانے کا اعلان ۔۔ وزیر اعلی بلوچستان

خون خرابہ نہیں  امن و ترقی چاہتے ہیں۔۔آل پارٹیز کانفرنس بلانے کا اعلان ۔۔ وزیر اعلی بلوچستان

کوئٹہ (ثناء نیوز +  این این آئی +  اے پی پی) وزیر اعلی بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے صوبے کی تمام مسلح تنظیموں سے مذاکرات کے لئے آل پارٹیز کانفرنس بلانے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار نجی ٹی وی سے انٹرویو میں  کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم خون خرابہ نہیں  امن و ترقی چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی صورتحال کے سیاسی بنیادوں پر حل کے لیے قبائلی عمائدین پر مشتمل جرگہ اور اہم سیاسی رہنماں کو تمام بلوچ علیحدگی پسند گروپوں اور فرقہ وارانہ تنظیموں کے پاس مذاکرات کے لیے بھیجیں گے۔ وزیر اعلی بلوچستان نے کہا کہ ان کے صوبے کو مسخ شدہ لاشوں، لاپتہ افراد اور ڈیرہ بگٹی اور ضلع کوہلو سے لوگوں کے لاپتہ ہونے جیسے مسائل کا سامنا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان میں طاقت کے استعمال کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوا مذاکرات  سے حل نکالیں گے۔  آواران میں سکیورٹی فورسز پر حملے کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہا کہ امدادی کارکنوں پر حملے حکومت کو امدادی سرگرمیوں سے نہیں روک سکتے۔ دریں اثنا  وزیراعلی  نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ متاثرہ علاقے میں نئی  اور زیادہ صحت مند اور روشن معاشرتی معاشی زندگی  کا آغاز کریں گے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے آزاد جموں   و کشمیر کے قائم مقام  وزیراعظم  چودھری  محمد یاسین سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔  آزاد کشمیر کے  قائم مقام  وزیراعظم نے زلزلہ متاثرین  کی امداد کے لئے 4 کروڑ  روپے کا چیک  وزیراعلی بلوچستان  کے حوالے کیا۔  دریں اثنا  وزیراعلی  نے کہا کہ  زلزلے سے متاثرہ  علاقوں  میں ریسکیو  کے بعد  ریلیف کی سرگرمیوں اور اگلے مرحلے میں متاثرین زلزلہ کی بحالی اور آبادکاری   ایک بڑا چیلنج  ہے جس سے نبردآزما  ہونے کیلئے مربوط  اور جامع  بنیادوں پر اقدامات کئے جا رہے ہیں حکومت زلزلہ متاثرین  کے مسائل کا ادراک  رکھتے ہوئے کوئی کسر اٹھا نہیں رکھے گی۔