خواتین پولنگ عملہ اور پولیس سے تلخ کلامی کے موقع پر علی امین نشے میں تھے‘ ڈی پی او ڈیرہ کا ڈی آئی جی کوخط

ڈیرہ اسما عیل خان (نامہ نگار) وزیر خیبر پی کے سردار علی امین خان گنڈا پور کی جانب سے 30 مئی کے بلدیاتی انتخابات کے دوران ہونیوالے واقعہ کی صورتحال ڈی پی او ڈیرہ کی جانب سے ڈی آئی جی کو لکھے گئے خط میں واضح کردی گئی ۔ ڈی پی او ڈیرہ نے لکھا کہ میں 31 مئی کو علی الصبح 4 بجکر 20 منٹ پر نائی ویلہ کے مقام پر ڈیوٹی پر تھا کہ مجھے اسسٹنٹ کمشنر ڈیرہ سلمان لودھی کی جانب سے کال موصول ہوئی کہ صو بائی وزیر مال علی امین خان گنڈا پور ریٹرننگ آفیسر عمر کنڈی کے ساتھ گاﺅں ہمت کے خواتین پولنگ سٹیشن میں داخل ہونا چاہتے ہیں، اضافی پولیس کی نفری بھجوائی جائے تاکہ صورتحال خراب نہ ہو، میں نے فوری طور پر ایس ایچ او تھانہ صدر کو موقع پر پہنچے کا کہا ، تھوڑی دیر بعد ایس ایچ او کی کال ملی کہ صوبائی وزیر مال علی امین نے مجھ سے تلخ کلامی کی، گالیاں دی، گریبان پر ہاتھ ڈالا اور اگر مجھے اس کیخلاف ایف آئی آر درج کرنے سے روکا گیا تو میں پولیس کی خدمات چھوڑ دوں گا مگر مجھے اے سی ڈیرہ کی جانب سے بتایا گیا کہ علی امین نشے میںہے۔ اس نے خواتین پولنگ عملہ سے تلخ کلامی کی اور ووٹوں سے بھرے بیگ اٹھا لئے۔ ڈی پی او نے لکھا کہ 5 بجکر 15 منٹ پر جب میں موقع پر پہنچا تو علی امین خان پولنگ سٹیشن سے نکل رہے تھے میں نے انہیں اور انکے بھائی کو روکنے کی کوشش کی مگر انہوں نے میری بات نہیں سنی اور اپنی بلٹ پروف گاڑی میں بیٹھ گئے۔
ڈی پی او ڈیرہ/ خط