بھارتی جیلوں میں جانوروں سا سلوک ہوتا تھا: پاکستانی ماہی گیر ؍ٹھٹھہ پہنچنے پر جذباتی مناظر

ٹھٹھہ (آئی این پی) پاکستان کی طرف سے بھارتی ماہی گیروں کی رہائی کے بعد بھارت سے رہا کردہ ضلع ٹھٹھہ سے تعلق رکھنے والے 5 بھائیوں سمیت 32  ماہی گیر اتوار کو جب اپنے آبائی گائوں میں پہنچے تو اس موقع پر انتہائی جذباتی مناظر دیکھنے میں آئے۔ علاقہ بھر سے بڑی تعداد میں لوگ موجود تھے۔ ماہی گیروں کو لیکر جب گاڑیاں چوہڑ جمالی کے نواحی علاقے میں واقع ان کے گائوں میں پہنچیں تو پھولوں کی پتیاں نچھاور کی گئیں۔ رہا ہو کر آنیوالے ماہی گیروں سے ان کے رشتہ دار لپٹ اور رو رو کر ملتے رہے۔ یہ ماہی گیر ڈیڑھ سال بھارتی جیلوں میں  قید رہنے کے بعد رہائی حاصل کر سکے۔ اس موقع پر رہا ہو کر آنیوالے ماہی گیروں نے بتایا کہ بھارتی جیلوں میں ان کے ساتھ وہاں جانوروں جیسا سلوک کیا جاتا تھا۔ ہمیں وقت پر روٹی تک نہیں دی جاتی تھی۔ پاکستانی قیدیوںکو ذہنی اور جسمانی تشدد کا نشانہ بنانا جیلوں کی انتظامیہ کا معمول ہے۔ قیدیوں نے بتایا کہ انہیں نہ تو وہاں علاج معالجے کی کوئی سہولت تھی حتیٰ کہ نہانے کی بھی ہفتے میں ایک بار اجازت تھی۔