”میں سلگتے ہوئے رازوں کو عیاں تو کردوں“ .... (آخری قسط)

سردار محمد اسلم سکھیرا
وہ مجاہدین اب دہشت گرد قراردئیے گئے اور القاعدہ اور طالبان کا نام دیکر جنگ شروع کی گئی۔ پاکستان کو ٹکڑے کرنے کی سازشیں بنائی گئیں۔ یہاں تک پاکستان کے اڈوں سے ہی ڈرون حملے پہلے افغانستان میں کئے جاتے تھے اب پاکستان کے وفادار جرگہ حجروں پر کئے جارہے ہیں۔ سرحد کا پختون علاقہ بلوچستان کا پختون علاقہ اور افغانستان کا پختون علاقہ کا الگ ملک بنانے کی کوشش کی جارہی ہے۔پاکستانی فوج کو مجبور کیاجارہا ہے کہ سرحد اور فاٹا،شمالی،جنوبی وزیرستان پرحملے کئے جائیں جس سے پختون پاکستان کے خلاف ہوں۔ پاکستانی حامیوں پر چن چن کر ڈرون حملے کئے جاتے ہیں حقانی نیٹ ورک پاکستان کیخلاف نہیں ان پر حملے کرنے کیلئے پاکستان کو مجبور کیاجارہا ہے۔ صوبائی خود مختاری کے بہانے سنٹر (مرکز) کو کمزور کیا جا رہا ہے 18 ویں ترمیم امریکہ کے ایما پر کی گئی جس سے مرکز کمزور ہو ۔مرکز کو کمزور کرنے کی سکیمیں مائیکل رپورٹ میں درج ہیں۔ گوادر پورٹ پرآئل، گیس،سونا،کوپر کی کانوں پر قبضہ کرنے کیلئے گریٹر بلوچستان کے نقشے تیار ہیں راجن پور ڈیرہ اسماعیل خاں، ڈیرہ غازی خاں کو بھی گریٹر بلوچستان میں شامل کرنے کی تجویزیں ہیں ایران کے بلوچ علاقہ کو بھی گریٹر بلوچستان میں شامل کرنے کی تجویزیں ہیں۔قارئین کو دیکھناچاہئے کہ یہ سرائیکی صوبہ کی جو آواز لگا رہے ہیں وہ ڈیرہ اسماعیل خاں، ڈیرہ غازی خاں راجن پور ہی نہیں مظفر گڑھ، ملتان کو شامل نہیں کر رہے۔بہاولپور کے سرائیکی صوبہ کے علمبردار صرف بہاولپور،رحیم یار خاں اور بہاولنگر کا ذکر کرتے ہیں۔ گیلانی صاحب اپنے صاحبزادہ کو سرائیکی صوبہ کا چیف منسٹر بنانے کے خواب دیکھ رہے ہیں لیکن انکو معلوم نہیں بہاولپور کے لوگ صرف پرانی ریاست بہاولپور کو صوبہ بنانا چاہتے ہیں۔ بین الاقوامی خواہش یہ ہے کہ راجن پور، ڈیرہ غازی خاں، ڈیرہ اسماعیل خاں کو افغانستان کے گریٹر بلوچستان میں شامل کیاجائے۔ چونکہ بین الاقوامی خواہش یہ ہے اسلئے ڈیرہ اسماعیل خاں، ڈیرہ غازی خاں، راجن پور کو سرائیکی صوبہ میں شامل کرنے کے ارادے نہیں۔ اسطرح بلوچستان کے پختون علاقہ کے لیڈروں سے کہلوایاجارہا ہے کہ بلوچستان کے دوصوبے ہونے چاہئیں ایک بلوچ اور دوسرا پختون بلوچ علاقہ کو گریٹر بلوچستان میں شامل کرلیاجائے اور پختون علاقہ کو پختون ملک میں شامل کیاجائے۔یہ مختلف صوبوں میں پہلے پاکستان کو تقسیم کرنے کی سازشیں جو رپورٹ الطاف حسین نے دکھائی ہیں اُن میں درج ہے۔اُن رپورٹس میں یہ بھی درج ہے کہ پاکستان کو اقتصادی طور پر کیسے کمزور کیا جائے۔ وہ نقشے جو الطاف حسین نے دکھائے ہیں نیٹو فورسز، پینٹا گون کے کورسز میں بھی شامل ہیں تاکہ فوجیوں کو ٹریننگ دی جائے کس طرح یہ نئے ملک بنانے ہیں ذوالفقار مرزا اور M.Q.M کی جنگ سے جو مثبت پہلو نکلا ہے وہ یہ ہے کہ بین الاقوامی سازشیں منظر عام پر لائی جارہی ہیں۔زہرہ نسیم صاحبہ، نثار عباسی صاحب اور ن لیگ کے سینیٹر صاحب نے T.V مناظرہ میں فرمایا کہ الطاف حسین نے پرانے وقتوں کے نقشے پیش کئے ہیں یعنی ہریسن مائیکل رپورٹ اور دیگر رپورٹ پرانی ہیں 1998 کی ہیں۔ الطاف حسین نے جو رپورٹ اور نقشہ جات پاکستان کو توڑنے کے دئیے ہیں وہ غور طلب کیوں نہیں ہیں اگر ان اینکر صاحبان یا T.V چینل پر مباحثہ کرنے والے حضرات کو چاہیں تو میں 1991ءکی رپورٹ انکی خدمت میں پیش کر دیتا ہوں۔
اس میں نقشہ بھی دیا ہوا ہے اور جن ملکوں کے ٹکڑے کئے جائینگے اُن اسلامی ملکوں کا نام بھی دیا ہے۔جو یہ ہیں کویت، پاکستان، قطر،سعودی عرب‘ شام‘ ترکی، یونائیٹڈ عرب امارات، ویسٹ بنک ساتھ نقشہ بھی دیا ہوا ہے۔اسمیں ان اسلامی ملکوں کے توڑنے کی تفصیل دی ہوئی ہے۔ اگر ان اینکر صاحبان کی ابھی تسلی نہیں ہوئی تو ایک اور پیرا انکی خدمت میں عرض کرونگا۔
Imperial eye in Pakistan
Pakistan in Pieces Part I by andrew govien Marshal by global Research May 28/2011
ملاحظہ فرمائیے کچھ اقتباسات
Introuduction
As the Purported assassination of Osama bin Laden has placed the focus on Pakistan, it is vital to assess the changing role of Pakistan in broad geostrategic terms, and in particular, of the changing American strategy toward Pakistan.The recently reported assassination was a propaganda poly aimed at targetting Pakistan.To understand this,it is necessary to examine how America has, in recent years, altered its strategy in Pakistan in the direction of destablization. In short, Pakistan is an American target. The reason:Pakistan;s growing military and strategic ties to China America\\\'s Primary global stratigic rivail. In the \\\'Great Game\\\' for global hegemony,any country that impedes America\\\'s world primacy-even one as historically significant to America as Pakistan-may be sacrificed upon the alter of war.
Part I of \\\'Pakistan in Pieces\\\' examines the changing views of the American strategic coummunity-particularly the military and intelligence circles-towards pakistan. In particular, there is a general acknowledgement that pakistan will very likely continue to be destabilized and ultimately collapse.What is now mentioned in there assessments, however,is the role of the military and intelligence communities in making this a reality; a veritable self-fulfilling prophecy. This part also examines the active on the ground changes in Amercian strategy in Pakistan,with increasing military incursions into the country.
مذکورہ بالا رپورٹس پاکستان کو تباہ کرنے کیلئے T.V اینکرصاحبان ملاحظہ کرلیں اور پھر بتائیں کہ پاکستان کو پہلے غیر مستحکم اور بعد میں ختم کرنے کی سکیمیں ابھی تک جاری ہیں۔ قوم کو ذوالفقار مرزا کا مشکور ہونا چاہئے کہ انہوں نے M.Q.M دشمنی میں بین الاقوامی سازشوں کو آشکار کرنے کا آغاز کیا اور الطاف حسین نے مزید راز افشا کئے....
میں سلگتے ہوئے رازوں کو عیاں تو کردوں
لیکن ان رازوں کی تشہیر سے بھی ڈرتا ہے
رات کے خواب اجالے میں بیاں تو کردوں
ان حسین خوابوں کی تعبیر سے بھی ڈرتا ہے
کراچی میں جودہشت گردی ہو رہی ہے سب امریکہ، بھارت، اسرائیل کے ایما پر ہورہی ہے۔ پاکستانی کچھ سیاسی پارٹیاں اُن ہی سے ڈالر لیکر پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوششیں کر رہی ہیں سیاسی لیڈروں کو بین الاقوامی سازشوں کو مد نظر رکھتے ہوئے ملکی بقا کی خاطر مل جل کر مقابلہ کرنا چاہئے۔ بلوچستان میں تخریب کاری بھی انہیں طاقتوں کی کارستانی ہے۔ خدا کیلئے لیڈر صاحبان ملک دشمنوں کی حمایت کی بجائے اس کی مذمت کریں۔ سب مل کر پاکستان کی بقا کا عہد کریںاور اس کیلئے عملی طورپر کام کریں۔ بارگاہ الہٰی میں استدعا ہے کہ وہ پاکستان کو سلامت رکھے۔ آمین!