متوقع امیدواروں کی نئی سیاسی حکمت عملی

متوقع امیدواروں کی نئی سیاسی حکمت عملی

1970کے الیکشن کے دوران ڈی جی خان کے حالات نے کروٹ بدلی اور ڈیرہ غازیخان سے پہلی عوامی شخصیت ڈاکٹر نذیر احمد شہید کی صورت میں ایم این اے منتخب ہوئے تھے۔ پھر ان کے بعد دوبارہ چراغوں میں روشنی نہ رہی اور ایک طویل عرصہ تک بلوچ سردار ہی یہاں کی عوام کے نمائندے منتخب ہوکر اسمبلیوں میں پہنچتے رہے لغاری اور کھوسہ سرداروں نے اپنے اپنے دور میں اقتدار کو اپنے پاس محدود رکھ کر اپنی سیاسی پوزیشن کو مضبوط کیے رکھا سردار فاروق احمد لغاری مرحوم جب تک زندہ رہے تو وہ ناقابل تسخیر رہے پھر ان کی وفات کے بعد لغاری تمن کے حالات نے بھی سیاسی پلٹا کھایا اور NA-172سے ایک عوامی اور سماجی شخصیت ڈاکٹر حافظ عبدالکریم2013کے الیکشن میںایم این اے منتخب ہوگئے اپنی خداد اد صلاحیتوں کی وجہ سے آجکل وہ وفاقی وزیر مواصلات ہیں لیکن ڈیرہ غازیخان پر ایک اور وزارت بھی مہربان ہوگئی ہے جو سردار اویس احمد خان لغاری کے حصہ میں آئی ہے جن کو ایک ہفتہ قبل وفاقی وزیر پانی و بجلی بنایا گیا ہے یہ ایک بہت اہم وزارت ہے جس کے ذریعے لغاری سردار ضلع بھر میں واپڈا کے حوالے سے عوام کے مسائل حل کرکے اپنی سیاسی پوزیشن مستقبل میں مزید مضبوط کرسکتے ہیں سردار اویس احمد لغاری سیاست کی تمام اعلی صلاحیتوں سے مالا مال ہیںجن سے توقع کی جاسکتی ہے کہ و ہ اپنی اس وزارت کے ذریعے مسلم لیگ (ن) کو سیاسی طور پر ضلع بھر میں مضبو ط کرنے کیلئے اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لائیں گے دوسری طرف مستقبل کے سیاسی حالات مسلم لیگ (ن) کے حق میں ہموار ہوتے نظر نہیں آتے میاں نواز شریف اور اس کے خاندان کیساتھ جس طرح کے مناظر فلمائے جارہے ہیں اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ میاں نواز شریف اور مسلم لیگ (ن) کو مستقبل میں شدید کٹھن حالات کا مقابلہ کرنا ہوگااعلیٰ قیادت کی مشکلات کے اثرات مقامی قیادت پر بھی مرتب ہونگے پھر یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا کہ چند عرصے کیلئے بنائے جانے والے وزراء مشکل وقت پڑنے پر کس طرح سے اپنی قیادت کیساتھ حق ’’وفا ‘‘ کرینگے ؟دوسری طرف ڈیرہ غازیخان میں ایک قد آور سیاسی شخصیت سردار ذوالفقار علی خان کھوسہ کی صورت میں بھی مسلم لیگ (ن) کو کافی ٹف ٹائم دے گی مسلم لیگ (ن) کی موجودہ مقامی قیادت میں گروپ بندی ابھی سے ہی عروج پر جارہی ہے ایک طرف لغاری سرداروں کا گروپ ہے تو دوسری طرف ڈاکٹر حافظ عبدالکریم ، سردار امجد فاروق خان کھوسہ اور دیگر مقامی رہنمائوں کے گروپ ہیں شہر کے صوبائی حلقہ 244پر لغاری گروپ اور ڈاکٹر حافظ عبدالکریم گروپ کے دو امیدوار سید عبدالعلیم شاہ اور لغاری گروپ کی طرف سے حنیف پتافی ایک دوسرے کے مد مقابل ہیں اسی طرح NA-172جس پر لغاری سردار اپنا آبائی سیاسی کلیم کا حق رکھنے کے دعویدار ہیں ۔ ڈاکٹر حافظ عبدالکریم بھی اس حلقہ پر اب دوبارہ امیدوار بننے کیلئے ایڑی چوٹی کا زور لگائے ہوئے ہیں جن کو یقینی طور پر میاں نواز شریف کی سیاسی حمایت حاصل ہے اب ان حالات میں ظاہر ہو رہا ہے کہ جس طرح سے اوپر مسلم لیگ (ن) کو سیاسی طور پر مشکلات کا سامنا ہے تو نیچے بھی یار لوگوں نے اپنے اپنے ذاتی مفادات کی خاطر اپنی پارٹی کو کمزور کرنے کا واضح عندیہ دیا ہوا ہے سردار ذوالفقار علی خان کھوسہ اپنے بیٹوں کو آپس میں متحد کرکے مستقبل میں زبردست اور مضبوط طریقے سے سیاسی لڑائی لڑتے نظر آتے ہیں تحریک انصاف ڈیرہ غازیخان میں پہلے کی نسبت زیادہ زور لگا کر اپنی ورکنگ کررہی ہے محترمہ زرتاج گل ، اخوند ہمایوں رضا ، ملک اقبال ثاقب ، سردار سیف الدین کھوسہ ، سردار احمد علی خان دریشک اپنے اپنے رنگ میں آنے والے الیکشن میں کامیابی حاصل کرنے کیلئے اپنی ورکنگ جاری رکھے ہوئے ہیں لیکن افسوس کہ تحریک انصاف میں بھی ایک دوسرے کی ٹانگیں کھینچنے اور درپردہ محلاتی سازشیں بھی کی جارہی ہیں NA-173پر وفاقی وزیر سردار اویس احمد خان لغاری اور سردار سیف الدین کھوسہ کے درمیان کانٹے دار مقابلے کی توقع موجود ہے سیف الدین خان کھوسہ اپنے حلقہ سمیت اپنی والد سردار ذوالفقار علی خان کھوسہ کے ساتھ مل کر ہر چیدہ شخصیت کی غمی خوشی میں شریک ہورہے ہیں جبکہ لغاری سردار بھی اپنی طویل غیر حاضری کے بعد اب اس سلسلے کو شروع کیے ہوئے ہیں جماعت اسلامی کے پلیٹ فارم سے شہر کی صوبائی نشست 244پر جماعت اسلامی کے صوبائی نائب امیر شیخ عثمان فاروق ایک مرتبہ پھر ایک نئے جوش اور ولولے کے ساتھ امیدوار بن کر میدان میں اتر چکے ہیں شیخ عثمان فاروق ڈیرہ غازیخان کی ایک حق گو شخصیت کے طور پر جانے جاتے ہیں وہ ہر حال میں وہ "اپنی خو نہ چھوڑیں گے،ہم اپنی وضع کیوں بدلیں"کے مصدق سیاسی میدان میں ڈٹے نظر آتے ہیں ڈیرہ غازیخان شہر کی حالت ابھی تک مسلم لیگ (ن) کی قیادت سے نہیں بدل سکی جو کام سابق ادوار میں ہوئے تھے ان کے بعد شہر اور ضلع کیلئے میگا پراجیکٹ شروع نہیں کیا جاسکا جس کی وجہ سے آنے والے دنوں میں حکومتی جماعت کو مشکلات پیش آ سکتی ہیں۔