پاکستانی وی آئی پی حج کلچر وزارت مذہبی امور کیلئے درد سر بن گیا

مکہ مکرمہ (خصوصی رپورٹ:جاوید اقبال بٹ) سعودی عرب میں متعین وزارت مذہبی امور کیلئے وی آئی پی حج کلچر درد سر بن گیا۔ 21 نومبر کو اسلام آباد سے آنے والی پرواز میں 422 وی آئی پی خواتین و حضرات سوار تھے ان کیلئے مکہ مکرمہ میں خصوصی رہائش کا انتظام کیا گیا تھا جن میں پاکستان سے حجاج کی خدمت کی غرض سے آئے ہوئے سٹاف کی بھاری تعداد ان وی آئی پی کے ناز نخرے اٹھانے کیلئے حاضر ہے۔ ان وی آئی پی حضرات میں وزرائ\\\' ڈائریکٹرز\\\' سیکرٹریز\\\' چیئرمین وزیراعلیٰ ہاﺅس کا سٹاف\\\' وزارت مذہبی امور کے عزیزو اقارب اور گورنر پنجاب کے اہل خانہ اور رشتہ دار شامل ہیں یہ وی آئی پیز پاکستان سے آخری حج پرواز میں آئے ہیں اور وزارت مذہبی امور کے متعین افسران ڈائریکٹر جنرل حج\\\' ڈائریکٹر حج\\\' ڈپٹی ڈائریکٹر حج کو اپنی تمام توانائیاں انہی لوگوں کے نازنخرے اٹھانے پر صرف کرنی پڑتی ہیں۔ حجاج کرام جو کہ حکومت کو ایک خطیر رقم کی ادائیگی اور لمبے انتظار کے بعد حج کی سعادت حاصل کرنے آتے ہیں ان وی آئی پیز کی وجہ سے ان کی حق تلفی ہوتی ہے اور دیار غیر میں ملک کی بدنامی بھی ہوتی ہے۔ صدر پاکستان\\\' وزیراعظم اور چیف جسٹس آف پاکستان کو اس قسم کے معاملات کا فوری نوٹس لیتے ہوئے وزارت مذہبی امور کے افسران کو اس قسم کے ناجائز دباﺅ سے نکالنا چاہئے تاکہ وہ حجاج کرام کی خدمت کرسکیں۔