پنجاب حکومت میں پی پی کو نمائندگی نہیں دی گئی: حاجی عزیز الرحمن

مدینہ منورہ (جاوید اقبال بٹ) عمرہ کی سعادت کےلئے آئے ہوئے پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما اور سابق ایم پی اے حاجی عزیز الرحمن چن نے مدینہ منورہ میں پاکستانی کمیونٹی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آصف علی زرداری پیپلز پارٹی کے سربراہ اور پاکستان کے آئنی صدر ہیں اور پیپلز پارٹی کی تمام قیادت ان کے ساتھ متفق اور متحد ہے۔ آصف علی زرداری پارٹی کی قیادت کرتے ہوئے اپنے اختیارات کے تحت جس پارٹی ورکر کو جس عہدہ پر رکھیں اور جس طرح پارٹی چلائیں یہ ان کا صوابدیدی اختیار ہے اور ہم تمام پارٹی ورکر ان کے فیصلوں کا تہہ دل سے احترام کرتے ہیں۔ جس طرح محترمہ بی بی شہید اپنی ٹیم کے ساتھ حکومت کرتی تھیں اسی طرح اب بھی وزیراعظم یوسف رضا گیلانی اور آصف زرداری پارٹی کی قیادت کر رہے ہیں۔ PPP کا بنیادی مقصد غریب عوام کی فلاح و بہبود اور ان کے حقوق کی نمائندگی کرنا ہے۔ پیپلز پارٹی ملک کے تمام اداروں کو عزت و تکریم دیتی ہے۔ پاکستان میں اس وقت وسائل کم اور مسائل زیادہ ہیں۔ انشاءاللہ ہم اپنے سیاسی اتحادیوں کے ساتھ مل کر ان مسائل کا حل تلاش کر رہے ہیں۔ پنجاب حکومت میں پیپلز پارٹی کو اس کے تناسب سے نمائندگی نہیں دی گئی جس کی وجہ سے پارٹی ورکروں کے بہت سے مسائل حل طلب ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ سستی روٹی سکیم کو اگر صحیح طریقہ سے اور ایمانداری سے چلایا جاتا تو یہ غریب عوام کےلئے ایک بہت بڑی سہولت تھی۔ لیکن یہاں تو چور بازاری کا ایک اور دروازہ کھل گیا ہے جس کی بابت پنجاب حکومت 70 ارب روپے کا خسارہ کر چکی ہے۔ انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ کچھ قوتیں پیپلز پارٹی کو عدلیہ اور بیوروکریسی سے متنازعہ کروانا چاہتی ہیں۔ ہم انشاءاللہ ان قوتوں کو شکست دیں گے۔ بجلی کے بحران کے حل کےلئے شارٹ ٹرم اور لانگ ٹرم منصوبوں پر عمل جاری و ساری ہے۔ انہوں نے کہا کہ افواج پاکستان نے سول حکومت کی قیادت میں آپریشن راہ نجات میں خاطر خواہ کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے بھارت کے ساتھ مذاکرات میں مسئلہ کشمیر شاہ رگ کی حیثیت رکھتا ہے اور ہمارے ایجنڈے میں کشمیر کا مسئلہ سب سے پہلے جبکہ دوسرے مسئلے ثانوی حیثیت رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بیرون ملک پاکستانیوں کے مسائل کے حل کےلئے ہر ممکن مدد کرنی چاہئے۔ پاکستانی کمیونٹی کا بھی فرض ہے کہ دیارِ حبیبﷺ میں بیٹھ کر پاکستان کی ترقی\\\' اتحاد اور بھائی چارے کےلئے دعا کریں۔