وزیراعظم اور وزیر خزانہ سےEOBI کے پنشنرز کی اپیل

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
 وزیراعظم اور وزیر خزانہ سےEOBI کے پنشنرز کی اپیل

مکرمی۔ پاکستان میں اس وقت صنعتی پنشنرز کا مسئلہ ایک گھمبیر صورتحال اختیار کر چکا ہے جو ہر سال جون میں بجٹ کا انتظار کرتے ہیں جس میں غریبوں اور محتاجوں کا بھی خیال رکھا جاتاہے لیکن صنعتی مزدوروں کو کچھ نہیں دیا جاتا جس سے ان میں کافی تشویش پائی جاتی ہے۔ بہت سے صنعتی پنشنرز بیمار اور بوڑھے ہیں۔ اکثر صنعتی مزدوروں کو 4620 روپے ماہوار پنشن ملتی ہے جس سے اس کمرتوڑ مہنگائی میں یوٹیلٹی بل‘ کرایہ مکان اور ادویات کی ضرورت پوری نہیں ہوتی ہے۔ دوسرے سرکاری اداروں کے پنشنروں کو 10% ادائیگی کر دی گئی ہے لیکن صنعتی مزدوروں کو کچھ بھی ادا نہیں کیا گیا۔ صنعتی مزدوروں کی کم از کم تنخواہ 15000/- روپے مقرر کی جائے۔وزیراعظم نواز شریف اور وزیر خزانہ اسحاق ڈار سے پرزور اپیل ہے کہ وہ فوری طور پر EOBIکے پنشنرز کی ماہانہ پنشن کم از کم 10,000/- مقرر فرمائیں تاکہ EOBI کے پنشنرز سکھ کا سانس لیں اور 2,000/- روپے میڈیکل الائونس دیا جائے۔ موجودہ حکومت کا یہ تیسرا بجٹ ہے دو  دفعہ بجٹ میں اعلان کر دیا گیا ہے لیکن نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا گیا۔ خیبر پختونخواہ میں مزدور کی تنخواہ 15,000/- روپے اور پنشن 6,000/- روپے ماہوار دی جا رہی ہے لہًذا پنجاب میں 10,000/- روپے پنشن مقرر کی جائے۔ (شاہد اکرام اللہ خان 110 منٹگمری پارک عبدالکریم روڈ لاہور)