عوام کے قیامت خیز دن

مکرمی! وفاقی وزیر توانائی و پانی راجہ پرویز اشرف صاحب حقیقت یہ ہے کہ لوڈ شیڈنگ ملک میں عروج پر پہنچی ہوئی ہے۔ سارا ملک (سوائے آپ کے) پریشان اکثریت بے روزگار ہے۔ چولہے ٹھنڈے پڑے ہیں مگر حیرت ہے کہ آپ اس قدم گرم موسم میں بھی گرم و قیمتی لباس زیب تن کئے رکھتے ہیں۔ گذشتہ دنوں اسلام آباد میں اعلیٰ سطح پر دو روزہ توانائی کانفرنس ہوئی جو کہ سہ روزہ میں تبدیل ہو گئی۔ عوام نے سکھ کا سانس لیا کہ چلو اب عوام کو بھی حقیقی زندگی میں ریلیف ملے ہی ملے۔ اب عوام کے قیامت خیز دن پھرنے والے ہیں۔ عوام اس سہ روزہ کانفرنس سے امیدیں وابستہ کر رہی تھی جاگتی آنکھوں سے دن کے اجالوں میں گرمی کی شدت میں امید لگائے بیٹھی تھی کہ اب ہمارے مہربان عوامی اور ملکی مفاد میں (بندے دے پتر) بنتے ہوئے اپنے کمیشن کو لاٹ مارتے ہوئے عوام کو مہنگی بجلی سے نجات دلائیں گے۔ رینٹل پاور پلانٹ سے نجات ملے گی۔ امریکی دباﺅ کو نظرانداز کر کے ملک و عوام کی خوشحالی کے لئے ایران سے سستی بجلی میسر ہو گی۔ تھر کول میں کوئلے کے وسیع ذخائر کو استعمال میں لایا جائے گا۔ بھارت سے سینہ تان کر آبی مسائل پر دوٹوک بات کی جائے گی۔ چھوٹے بڑے ڈیم کے علاوہ کالا باغ ڈیم کے لئے حالات سازگار کئے جائیں گے مگر نااہل عقل و ذہانت سے عاری اور قومی خزانے پر بوجھ بنے حکمرانوں پر، سہ روزہ توانائی کانفرنس کے بعد بھی فیصلہ آیا تو بھی کیا۔ (نیر صدف لاہور)